Nazar Fareb-E-Qaza Kha Gai To Kya Hoga

شاعر :احسان دانش
غزل
نظر فریب قضا کھا گئی تو کیا ہوگا
حیات موت سے ٹکرا گئی تو کیا ہوگا

بزعم ہوش تجلی کی جستجو بے سود
جنوں کی زد پہ خرد آ گئی تو کیا ہوگا

نئی سحر کے بہت لوگ منتظر ہیں مگر
نئی سحر بھی جو کجلا گئی تو کیا ہوگا

نہ رہنماؤں کی مجلس میں لے چلو مجھ کو
میں بے ادب ہوں ہنسی آ گئی تو کیا ہوگا

شباب لالہ و گل کو پکارنے والو
خزاں سرشت بہار آ گئی تو کیا ہوگا

خوشی چھنی ہے تو غم کا بھی اعتماد نہ کر
جو روح غم سے بھی اکتا گئی تو کیا ہوگا

یہ فکر کر کہ ان آسودگی کے دھوکوں میں
تری خودی کو بھی موت آ گئی تو کیا ہوگا

لرز رہے ہیں جگر جس سے کوہساروں کے
اگر وہ لہر یہاں آ گئی تو کیا ہوگا

وہ موت جس کی ہم احسانؔ سن رہے ہیں خبر
رموز زیست بھی سمجھا گئی تو کیا ہوگا
 

GHAZAL

Nazar Fareb-E-Qaza Kha Gai To Kya Hoga
Hayat maut se takra gai to kya hoga

Ba-zom-e-hosh tajalli ki justuju be-sud
Junun ki zad pe khirad aa gai to kya hoga

Nai sahar ke bahut log muntazir hain magar
Nai sahar bhi jo kajla gai to kya hoga

Na rahnumaon ki majlis mein le chalo mujh ko
Main be-adab hun hansi aa gai to kya hoga

Shabab-e-lal-o-gul ko pukarne walo
Khizan-sarisht bahaar aa gai to kya hoga

Khushi chhani hai to gham ka bhi e’timad na kar
Jo ruh gham se bhi ukta gai to kya hoga

Ye fikr kar ki in aasudgi ke dhokon mein
Teri khudi ko bhi maut aa gai to kya hoga

Laraz rahe hain jigar jis se kohsaron ke
Agar wo lahr yahan aa gai to kya hoga

Wo maut jis ki hum ‘ehsan’ sun rahe hain khabar
Rumuz-e-zist bhi samjha gai to kya hoga

اپنا تبصرہ بھیجیں