Zameen Sang Se Suraaj Ugane Walay Hath

Zameen Sang Se Suraaj Ugane Walay Hath

Zameen Sang Se Suraaj Ugane Walay Hath
Kise khabar thi us shahr mein qalam hoon gay

Jahan se parcham-e-dast hunar buland howa
Zameen aqeda-e-farda se lala rang hoi

Ufuq sitara mehnat se arjmand howa
Aur ab ke bar qalam bhi unhin ke sath rahe

Jo apni fath keh nasha mein choor nakhwat se
Dareeda damani ahl-e-dil pe hanste hain
Faghaan-e-qafla muzmahil pe hanste hain

Zameen sang se suraaj ugane walay hath
Kise khabar thi us shahr mein qalam hoon gay
نظم
زمین سنگ سے سورج اگانے والے ہاتھ
کسے خبر تھی کہ اس شہر میں قلم ہوں گے

جہاں سے پرچم دست ہنر بلند ہوا
زمیں عقیدہ فردا سے لالہ رنگ ہوئی

افق ستارہ محنت سے ارجمند ہوا
اور اب کے بار قلم بھی انہیں کے ساتھ رہے

جو اپنی فتح کے نشہ میں چور نخوت سے
دریدہ دامنی اہل دل پہ ہنستے ہیں
فغان قافلہ مضمحل پہ ہنستے ہیں

زمین سنگ سے سورج اگانے والے ہاتھ
کسے خبر تھی کہ اس شہر میں قلم ہوں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں