Tashnagi Jism Ki Miti Mein Gari Milti Hai

Tashnagi Jism Ki Miti Mein Gari Milti Hai

Tashnagi Jism Ki Miti Mein Gari Milti Hai
Aisa lagta hai keh pyason se lari milti hai

Aankhen tareek naseeb inn se zyada tareek
Hum agar hath bhi mangen to chhari milti hai

Iss bina par mein samjhta hoon keh yeh jurwan hain
Ishq ki shakal aziyat se bari milti hai

Ahl-e-khana mujhe ab waqt nahi de patay
Waisay har saal janam din peh ghari milti hai

Zindagi khasata-o-pa-mal mili thi mujh ko
Jaise rastay peh koi cheez pari milti hai

Sans chirh jati hai aaghaz safar mein apni
Mere jaison ko kahan rail khari milti hai

Aabar dekhon to baras parti hain aankhen najist
Thal ka basi hoon muqaddar se jhari milti hai

Tashnagi jism ki miti mein gari milti hai
Aisa lagta hai keh pyason se lari milti hai
غزل
تشنگی جسم کی مٹی میں گڑی ملتی ہے
ایسا لگتا ہے کہ پیاسوں سے لڑی ملتی ہے

آنکھیں تاریک نصیب اِن سے زیادہ تاریک
ہم اگر ہاتھ بھی مانگیں تو چھڑی ملتی ہے

اِس بنا پر میں سمجھتا ہوں کہ یہ جڑواں ہیں
عشق کی شکل اذیت سے بڑی ملتی ہے

اہلِ خانہ مجھے اب وقت نہیں دے پاتے
ویسے ہر سال جنم دن پہ گھڑی ملتی ہے

زندگی خستہ و یا مال ملی تھی مجھ کو
جیسے رستے پہ کوئی چیز پڑی ملتی ہے

سانس چڑھ جاتی ہے آغاز سفر میں اپنی
میرے جیسوں کو کہاں ریل کھڑی ملتی ہے

آبر دیکھوں تو برس پڑتی ہیں آنکھیں نجست
تھل کا باسی ہوں مقدر سے جھڑی ملتی ہے

تشنگی جسم کی مٹی میں گڑی ملتی ہے
ایسا لگتا ہے کہ پیاسوں سے لڑی ملتی ہے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں