Hum Apne Ap Se Begane Thori Hotay Hain, anwar shoor ghazal

Hum Apne Ap Se Begane Thori Hotay Hain

Hum Apne Ap Se Begane Thori Hotay Hain

Sarwar-o-kafiyat mein deewane thori hotay hain

Gina kro nah Piyalay hamein pilatay waqt
Zarof-o-zaraf ke pemane thori hotay hain
 
Tabah soch samjh kar nahi howa jata
Jo dil lagate hain farzane thori hotay hain
 
Barah-e-raast asar daaltay hain sachay bol
Kisi dalil se manwane thori hotay hain
 
Jo log atay hain milne tere hawalay se
Nay tou hotay hain anjane thori hotay hain
 
Issi zameen ki gahzalon se hotay hain abad
Dilon ke dasht per pari khanay thori hotay hain
 
Hamesha hath mein rehte hain phool un ke liye
Kisi ko bhaij ke mangwane thori hotay hain
 
Khayal-o-khawab ki rehti hai garam bazari
Damag-o-dil kabhi veerne thori hotay hain
 
Kisi gareeb ko zakhmi karen keh qatal karin
Nigah-e-naaz pe jurmane thori hotay hain
 
Shoor tum ne khuda jane kia kiya ho ga
Zara si baat ke afsane thori hotay hain
 
Hum apne ap se Begane thori hotay hain
Sarwar-o-kafiyat mein deewane thori hotay hain
غزل
ہم اپنے آپ سے بیگانے تھوڑی ہوتے ہیں
سرور و کفیت میں دیوانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
گِنا کرو نہ پیالے ہمیں پلاتے وقت !
ظرُوف ظرف کے پیمانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
تباہ سوچ سمجھ کر نہیں ہوا جاتا
جو دل لگاتے ہیں فرزانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
براہ راست اثر ڈالتے ہیں سچے بول
کسی دلیل سے منوانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
جو لوگ آتے ہیں ملنے ترے حوالے سے
نئے تو ہوتے ہیں انجانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
اسی زمیں کے غزالوں سے ہوتے ہیں آباد
دلوں کے دشت پر پری خانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
ہمیشہ ہاتھ میں رہتے ہیں پھول ان کے لیے
کسی کو بھیج کے منگوانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
خیال و خواب کی رہتی ہے گرم بازاری
دماغ و دل کبھی ویرانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
نہ آئیں آپ تو محفل میں کون آتا ہے
جلے نہ شمع تو پروانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
کسی غریب کو زخمی کریں کہ قتل کریں
نگاہِ ناز پہ جرمانے تھوری ہوتے ہیں
 
شعورؔ تم نے خدا جانے کیا کیا ہوگا
زرا سی بات کے افسانے تھوڑی ہوتے ہیں
 
ہم اپنے آپ سے بیگانے تھوڑی ہوتے ہیں
سرور و کفیت میں دیوانے تھوڑی ہوتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں