Jis Ne Bhi Hans Ke Baat Ki Tou Ne Galay Laga Liye

Jis Ne Bhi Hans Ke Baat Ki Tou Ne Galay Laga Liye

Ghazal
Jis Ne Bhi Hans Ke Baat Ki Tu Ne Galay Laga Liye
Bheed main kia pta chale mera raqeeb kon hai

Tu bhi mareez-e-hijr tha tujh ko bhi tou shafa hoi 
Tu bhi mareez ko bata tera tabib kon hai

Sheher main yani deher main apna koi nahi tera
Tujh sa haseen koi nahi tujh sa gareeb kon hai

Usko ajab ki hai talash mujh main ajeeb kuch nahi
Mujh main ajeeb kuch nahi mujh sa ajeeb kon hai

Jis ne bhi hans ke baat ki tu ne galay laga liye
Bheed main kia pta chale mera raqeeb kon hai
غزل
جس نے بھی ہنس کے بات کی تونے گلے لگا لیا
بھیڑ میں کیا پتہ چلے میرا رقیب کوں ہے

تو بھی مریض ہجر تھا تجھکو بھی تو شفا ہوئی
اپنے مریض کو بتا تیرا طبیب کون ہے

شہر میں یعنی دہر میں اپنا کوئی نہیں تیرا
تجھ سا حسین کوئی نہیں تجھ سا غریب کون ہے

اُس کو عجب کی ہے تلاش مجھ میں عجیب کچھ نہیں
مجھ میں عجیب کچھ نہیں مجھ سا عجیب کون ہے

جس نے بھی ہنس کے بات کی تونے گلے لگا لیا
بھیڑ میں کیا پتہ چلے میرا رقیب کوں ہ

اپنا تبصرہ بھیجیں