Shah-Sazi Main Riayat Bhi Nahi Karte Ho

Shah-Sazi Main Riayat Bhi Nahi Karte Ho

Ghazal
Shah-Saazi Main Riayat Bhi Nahi Karte Ho
Samne aa ke hukumat bhi nahi karte ho

Ab mere haal pe kyu tumhain pershani hai
Ab tou tum mujh se mohabbat bhi nahi karte ho

Pyar karne ki sanad kaise tumhain jari karon
Tum abhi theek se nafrat bhi nahi karte ho

Mashwara muft diya karte thay deewano ko
Kia hua ab nasihat bhi nahi karte ho

Shah-sazi main riayat bhi nahi karte ho
Samne aa ke hukumat bhi nahi karte ho
غزل
شاہ سازی میں رعایت بھی نہیں کرتے ہو
سامنے آ کے حکومت بھی نہیں کرتے ہو

اب میرے حال پہ کیوں تمہیں پریشانی ہے
اب تو تم مجھ سے محبت بھی نہیں کرتے ہو

پیار کرنے کی سند کیسے تمہیں جاری کرو
تم ابھی ٹھیک سے نفرت بھی نہیں کرتے ہو

مشورے مفت دیا کرتے تھے دیوانوں کو
کیا ہوا اب تو نصحیت بھی نہیں کرتے ہو

شاہ سازی میں رعایت بھی نہیں کرتے ہو
سامنے آ کے حکومت بھی نہیں کرتے ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں