Dil Tor Nah Dena Keh Khuda | Ehsan Danish Poetry

Dil Tor Nah Dena Keh Khuda | Ehsan Danish Poetry

Dil Tor Nah Dena Keh Khuda Sath Hai Beti
Laaj us meri darhi ki tire hath hai beti

Aaya jo nazar mujh ko yeh jankah nzarah
Ehsan nah aankhon ko raha zabat ka yaara

Tapne lagi har saans meri sooz-e-nahaan se
Itna hai mujhe yad keh nikla yeh zuban se

Aa khaliq-e-konain yeh tou ne bhi suna hai
Duniya ka gumaan hai keh gharebo ka khuda hai

Tou jin ka khuda un ka ho gardish mein sitara
Kya tere karam ko yeh sitam bhi hai gawara

Kis tarha nah ho dil ko bhala ranj-e-mahan dekh
Mazdoor ke is zinda janaze ka kafan dekh

Eshan kabhi dil se juda ho nahi sakta
Insan hai insan khuda ho nahi sakta

Dil tor nah dena keh khuda sath hai beti
Laaj us meri darhi ki tire hath hai beti
نظم
دل توڑ نہ دینا کہ خدا ساتھ ہے بیٹی
لاج اس مری داڑھی کی ترے ہاتھ ہے بیٹی

آیا جو نظر مجھ کو یہ جانکاہ نظارہ
احسان نہ آنکھوں کو رہا ضبط کا یارا

تپنے لگی ہر سانس مری سوزِ نہاں سے
اتنا ہے مجھے یاد کہ نکلا یہ زباں سے

اے خالقِ کونین یہ تو نے بھی سنا ہے
دنیا کا گماںِ ہے کہ غریبوں کا خدا ہے

تو جن کا خدا ان کا ہو گردش میں ستارہ
کیا تیرے کرم کو یہ ستم بھی ہے گوارا

کس طرح نہ ہو دل کو بھلا رنج و محن دیکھ
مزدور کے اس زندہ جنازے کا کفن دیکھ

احساس کبھی دل سے جدا ہو نہیں سکتا
انسان ہے انسان خدا ہو نہیں سکتا

دل توڑ نہ دینا کہ خدا ساتھ ہے بیٹی
لاج اس مری داڑھی کی ترے ہاتھ ہے بیٹی
 

اپنا تبصرہ بھیجیں