Yeh Dukh Alag Hai Keh Main Us Say Door Ho Raha Hun

غزل
یہ دکھ الگ ہے کہ میں اُس سے دور ہو رہا ہوں
یہ غم جدا ہے کہ وہ مجھے خود دور کر رہا ہے

تجھ سے بچھڑنے پرلکھ رہا ہوں تازہ غزلیں
یہ تیرا غم ہے جومجھ کو مشہورکررہا ہے

کیا غلط فہمی میں رہے جانے کا صدمہ کچھ نہیں
وہ مجھے سمجھا بھی توسکتا تھا کہ ایسا کچھ نہیں

عشق سے بچ کر بھی کچھ نہیں ہوتا بندہ مگر
یہ بھی سچ ہے کہ عشق میں بندے کا بچتا کچھ نہیں
Ghazal
Yeh Dukh Alag Hai Keh Main Us Say Door Ho Raha Hun
Yeh gham juda hai keh wo mujhy khud door kar raha hai

Tujh say bicharnay par lekh raha hun taza ghazalian
Yeh tera gham hai jo mujh ko mashoor kar raha hai

Kiya galat fehmi main reh janay ka sadma kuch nahi
Wo mujhy samjha bhi to sakta tha keh asia kuch nahi

Ishq say bach kr bhi kuch nahi hota banda magar
Yeh bhi such hai keh ishq main banday ka bachta kuch nahi

اپنا تبصرہ بھیجیں