Yeh Jo Hijrat Ky Maaray Howay Hain

غزل
یہ جو ہجرت کے مارے ہوئے ہیں یہاں اگلے مصرے پے رو کے کہے گے کہ ہاں
آدمی دیس چھوڑے تو چھوڑے علیؔ دل میں بستا ہوا گھر نہیں چھوڑتا

زخمے فرقت تو دونوں کوآیا تھا نہ ، کون بے چین ہے یہ بتا دے زرا
اک میں ہوں کے نیندیں نہیں آرہی اک تو ہے کے بستر نہیں چھوڑتا

اس کی زد میں جو آیا رہا ہی نہیں جس کو یہ ہو گیا بچا ہی نہیں
تو گلی میں سرکشت ہے کیا عشق سے یہ تو بندے کو اندر نہیں چھوڑتا

یہ جو ہجرت کے مارے ہوئے ہیں یہاں اگلے مصرے پے رو کے کہے گے کہ ہاں
آدمی دیس چھوڑے تو چھوڑے علیؔ دل میں بستا ہوا گھر نہیں چھوڑتا
Ghazal
Yeh Jo Hijrat Ky Maaray Howay Hain, Yahaan Aglay Misray Pay Ro Ky Kehay Gay Keh Haan
Admi diyas choray to chory ali dil main basta howa ghar nahi chorta

Zakhmay forqat to dono ko aya tha na, kon by-chaan hai yeh bata day zara
Ek main hun ky ninedin nahi a rahi ek to hai ky bister nahi chorta

Is ki zad ma jo aya raha hi nahi jis ko yeh hogaya bacha hi nahi
To gali ma surakshat hai kiya ishq say , yeh to banday ko andar nahi chorta

Yeh jo hijrat ky maaray howay hain, yahaan aglay misray pay ro ky kehay gay keh haan
Admi diyas choray to chory ali dil main basta howa ghar nahi chorta

اپنا تبصرہ بھیجیں