Gulon Mein Rang Bhare Baad-e-nau- Bahar Chale

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے
قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے
کبھی تو صبح ترے کنج لب سے ہو آغاز
کبھی تو شب سر کاکل سے مشکبار چلے
بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی
تمہارے نام پہ آئیں گے غم گسار چلے
جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شب ہجراں
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے
حضور یار ہوئی دفتر جنوں کی طلب
گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے
مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے
gulon mein rang bhare baad-e-nau-bahaar chale
chale bhi aao ki gulshan ka karobar chale

qafas udas hai yaro saba se kuchh to kaho
kahin to bahr-e-khuda aaj zikr-e-yar chale

kabhi to subh tere kunj-e-lab se ho aaghaz
kabhi to shab sar-e-kakul se mushk-bar chale

bada hai dard ka rishta ye dil gharib sahi
tumhaare nam pe aaenge gham-gusar chale

jo hum pe guzri so guzri magar shab-e-hijran
hamare ashk teri aaqibat sanwar chale

huzur-e-yar hui daftar-e-junun ki talab
girah mein le ke gareban ka tar tar chale

maqam ‘faiz’ koi rah mein jacha hi nahin
jo ku-e-yar se nikle to su-e-dar chale

اپنا تبصرہ بھیجیں