Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visal E Yaar Hota

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا
اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا
ترے وعدے پر جیے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا
کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا
تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا
کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا
کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیر نیم کش کو
یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا
یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح
کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا
رگ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا
جسے غم سمجھ رہے ہو یہ اگر شرار ہوتا
غم اگرچہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے
غم عشق گر نہ ہوتا غم روزگار ہوتا
کہوں کس سے میں کہ کیا ہے شب غم بری بلا ہے
مجھے کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا
ہوئے مر کے ہم جو رسوا ہوئے کیوں نہ غرق دریا
نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا
اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا
جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا
یہ مسائل تصوف یہ ترا بیان غالبؔ
تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا
ye na thi hamari qismat ki visal-e-yar hota
agar aur jite rahte yahi intizar hota

tere wade par jiye hum to ye jaan jhut jaana
ki khushi se mar na jate agar e’tibar hota

teri nazuki se jaana ki bandha tha ahd boda
kabhi tu na tod sakta agar ustuwar hota

koi mere dil se puchhe tere tir-e-nim-kash ko
ye khalish kahan se hoti jo jigar ke par hota

ye kahan ki dosti hai ki bane hain dost naseh
koi chaarasaz hota koi gham-gusar hota

rag-e-sang se tapakta wo lahu ki phir na thamta
jise gham samajh rahe ho ye agar sharar hota

gham agarche jaan-gusil hai pa kahan bachen ki dil hai
gham-e-ishq gar na hota gham-e-rozgar hota

kahun kis se main ki kya hai shab-e-gham buri bala hai
mujhe kya bura tha marna agar ek bar hota

hue mar ke hum jo ruswa hue kyun na gharq-e-dariya
na kabhi janaza uthta na kahin mazar hota

use kaun dekh sakta ki yagana hai wo yakta
jo dui ki bu bhi hoti to kahin do-chaar hota

ye masail-e-tasawwuf ye tera bayan ‘ghaalib’
tujhe hum wali samajhte jo na baada-khwar hota

اپنا تبصرہ بھیجیں