Takhlik

تخلیق:
     درد کی آگ بجھا دو کہ ابھی وقت نہیں
زخم دل جاگ سکے نشتر غم رقص کرے
جو بھی سانسوں میں گھلا ہے اسے عریاں نہ کرو
چپ بھی شعلہ ہے مگر کوئی نہ الزام دھرے
ایسے الزام کہ خود اپنے تراشے ہوئے بت
جذبۂ کاوش خالق کو نگوں سار کریں
مو قلم حلقۂ ابرو کو بنا دے خنجر
لفظ نوحوں میں رقم مدح رخ یار کریں
رقص مینا سے اٹھے نغمۂ رقص بسمل
ساز خود اپنے مغنی کو گنہ گار کریں
مرہم اشک نہیں زخم طلب کا چارہ
خوں بھی روؤگے تو کس خاک کی سج دھج ہوگی
کانپتے ہاتھوں سے ٹوٹی ہوئی بنیادوں پر
جو بھی دیوار اٹھاؤ گے وہی کج ہوگی
کوئی پتھر ہو کہ نغمہ کوئی پیکر ہو کہ رنگ
جو بھی تصویر بناؤ گے اپاہج ہوگی
:Takhliik
dard ki aag bujha do ki abhi waqt nahin
 zakhm-e-dil jag sake nashtar-e-gham raqs kare 

jo bhi sanson mein ghula hai use uryan na karo
chup bhi shola hai magar koi na ilzam dhare

aise ilzam ki khud apne tarashe hue but
jazba-e-kawish-e-khaliq ko nigun-sar karen

mu-qalam halqa-e-abru ko bana de khanjar
lafz nauhon mein raqam madh-e-rukh-e-yar karen

raqs-e-mina se uthe naghma-e-raqs-e-bismil
saz khud apne mughanni ko gunahgar karen

marham-e-ashk nahin zakhm-e-talab ka chaara
khun bhi rooge to kis khak ki saj-dhaj hogi

kanpte hathon se tuti hui buniyaadon par
jo bhi diwar uthaoge wahi kaj hogi

koi patthar ho ki naghma koi paikar ho ki rang
jo bhi taswir banaoge apahaj hogi

اپنا تبصرہ بھیجیں