Apne Ghar Ki Khidki Se Main Aasman Ko Dekhunga

اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا
جس پر تیرا نام لکھا ہے اس تارے کو ڈھونڈوں گا

تم بھی ہر شب دیا جلا کر پلکوں کی دہلیز پہ رکھنا
میں بھی روز اک خواب تمہارے شہر کی جانب بھیجوں گا

ہجر کے دریا میں تم پڑھنا لہروں کی تحریریں بھی
پانی کی ہر سطر پہ میں کچھ دل کی باتیں لکھوں گا

جس تنہا سے پیڑ کے نیچے ہم بارش میں بھیگے تھے
تم بھی اس کو چھو کے گزرنا میں بھی اس سے لپٹوں گا

خواب مسافر لمحوں کے ہیں ساتھ کہاں تک جائیں گے
تم نے بالکل ٹھیک کہا ہے میں بھی اب کچھ سوچوں گا

بادل اوڑھ کے گزروں گا میں تیرے گھر کے آنگن سے
قوس قزح کے سب رنگوں میں تجھ کو بھیگا دیکھوں گا

بے موسم بارش کی صورت دیر تلک اور دور تلک
تیرے دیار حسن پہ میں بھی کن من کن من برسوں گا

شرم سے دہرا ہو جائے گا کان پڑا وہ بندا بھی
باد صبا کے لہجے میں اک بات میں ایسی پوچھوں گا

صفحہ صفحہ ایک کتاب حسن سی کھلتی جائے گی
اور اسی کی لے میں پھر میں تم کو ازبر کر لوں گا

وقت کے اک کنکر نے جس کو عکسوں میں تقسیم کیا
آب رواں میں کیسے امجدؔ اب وہ چہرہ جوڑوں گا

apne ghar ki khidki se main aasman ko dekhunga
jis par tera nam likha hai us tare ko dhundunga
 
tum bhi har shab diya jala kar palkon ki dahliz pe rakhna
main bhi roz ek khawab tumhaare shahr ki jaanib bhejunga
 
hijr ke dariya mein tum padhna lahron ki tahriren bhi
pani ki har satr pe main kuchh dil ki baaten likhunga
 
jis tanha se ped ke niche hum barish mein bhige the
tum bhi us ko chhu ke guzarna main bhi us se liptunga
 
khwab musafir lamhon ke hain sath kahan tak jaenge
tum ne bilkul Thik kaha hai main bhi ab kuchh sochunga
 
baadal odh ke guzrunga main tere ghar ke aangan se
qaus-e-quzah ke sab rangon mein tujh ko bhiga dekhunga
 
be-mausam barish ki surat der talak aur dur talak
tere dayar-e-husn pe main bhi kin-min kin-min barsunga
 
sharm se dohra ho jaega kan pada wo bunda bhi
baad-e-saba ke lahje mein ek baat mein aisi puchhunga
 
safha safha ek kitab-e-husn si khulti jaegi
aur usi ki lai mein phir main tum ko azbar kar lunga
 
waqt ke ek kankar ne jis ko akson mein taqsim kiya
aab-e-rawan mein kaise ‘amjad’ ab wo chehra jodunga

اپنا تبصرہ بھیجیں