Waqt

نظم :یہ وقت کیا ہے?
یہ کیا ہے آخر کہ جو مسلسل گزر رہا ہے
یہ جب نہ گزرا تھا
تب کہاں تھا
کہیں تو ہوگا
گزر گیا ہے
تو اب کہاں ہے
کہیں تو ہوگا
کہاں سے آیا کدھر گیا ہے
یہ کب سے کب تک کا سلسلہ ہے

یہ وقت کیا ہے?
یہ واقعے
حادثے
تصادم
ہر ایک غم
اور ہر اک مسرت
ہر اک اذیت
ہر ایک لذت
ہر اک تبسم
ہر ایک آنسو
ہر ایک نغمہ
ہر ایک خوشبو
وہ زخم کا درد ہو
کہ وہ لمس کا ہو جادو
خود اپنی آواز ہو کہ ماحول کی صدائیں
یہ ذہن میں بنتی اور بگڑتی ہوئی فضائیں
وہ فکر میں آئے زلزلے ہوں کہ دل کی ہلچل
تمام احساس
سارے جذبےیہ جیسے پتے ہیں
بہتے پانی کی سطح پر
جیسے تیرتے ہیں
ابھی یہاں ہیں
ابھی وہاں ہیں
اور اب ہیں اوجھل
دکھائی دیتا نہیں ہے لیکن
یہ کچھ تو ہے
جو کہ بہہ رہا ہے
یہ کیسا دریا ہے
کن پہاڑوں سے آ رہا ہے
یہ کس سمندر کو جا رہا ہے

یہ وقت کیا ہے?
کبھی کبھی میں یہ سوچتا ہوں
کہ چلتی گاڑی سے پیڑ دیکھو
تو ایسا لگتا ہے
دوسری سمت جا رہے ہیں
مگر حقیقت میں
پیڑ اپنی جگہ کھڑے ہیں
تو کیا یہ ممکن ہے
ساری صدیاں
قطار اندر قطار اپنی جگہ کھڑی ہوں
یہ وقت ساکت ہو
اور ہم ہی گزر رہے ہوں
اس ایک لمحے میں
سارے لمحے
تمام صدیاں چھپی ہوئی ہوں
نہ کوئی آئندہ
نہ گزشتہ
جو ہو چکا ہے
جو ہو رہا ہے
جو ہونے والا ہے
ہو رہا ہے
میں سوچتا ہوں
کہ کیا یہ ممکن ہے
سچ یہ ہو
کہ سفر میں ہم ہیں
گزرتے ہم ہیں
جسے سمجھتے ہیں ہم
گزرتا ہے
وہ تھما ہے
گزرتا ہے یا تھما ہوا ہے
اکائی ہے یا بٹا ہوا ہے
ہے منجمد
یا پگھل رہا ہے
کسے خبر ہے
کسے پتا ہے

یہ وقت کیا ہے?
یہ کائنات عظیم
لگتا ہے
اپنی عظمت سے
آج بھی مطمئن نہیں ہے
کہ لمحہ لمحہ
وسیع تر اور وسیع تر ہوتی جا رہی ہے
یہ اپنی بانہیں پسارتی ہے
یہ کہکشاؤں کی انگلیوں سے
نئے خلاؤں کو چھو رہی ہے
اگر یہ سچ ہے
تو ہر تصور کی حد سے باہر
مگر کہیں پر
یقیناً ایسا کوئی خلا ہے
کہ جس کو
ان کہکشاؤں کی انگلیوں نے
اب تک چھوا نہیں ہے
خلا
جہاں کچھ ہوا نہیں ہے
خلا
کہ جس نے کسی سے بھی ”کن” سنا نہیں ہے
جہاں ابھی تک خدا نہیں ہے
وہاں
کوئی وقت بھی نہ ہوگا
یہ کائنات عظیم
اک دن
چھوئے گی
اس ان چھوئے خلا کو
اور اپنے سارے وجود سے
جب پکارے گی
”کن”
تو وقت کو بھی جنم ملے گا
اگر جنم ہے تو موت بھی ہے
میں سوچتا ہوں
یہ سچ نہیں ہے
کہ وقت کی کوئی ابتدا ہے نہ انتہا ہے
یہ ڈور لمبی بہت ہے
لیکن
کہیں تو اس ڈور کا سرا ہے
ابھی یہ انساں الجھ رہا ہے
کہ وقت کے اس قفس میں
پیدا ہوا
یہیں وہ پلا بڑھا ہے
مگر اسے علم ہو گیا ہے
کہ وقت کے اس قفس سے باہر بھی اک فضا ہے
تو سوچتا ہے
وہ پوچھتا ہے
یہ وقت کیا ہے
 
Poem:Yeh Waqt Kya Hai
ye kya hai aakhir ki jo musalsal guzar raha hai
ye jab na guzra tha
tab kahan tha
kahin to hoga
guzar gaya hai
to ab kahan hai
kahin to hoga
kahan se aaya kidhar gaya hai
ye kab se kab tak ka silsila hai
ye waqt kya hai
ye waqiye
hadse
tasadum
har ek gham
aur har ek masarrat
har ek aziyyat
har ek lazzat
har ek tabassum
har ek aansu
har ek naghma
har ek KHushbu
wo zaKHm ka dard ho
ki wo lams ka ho jadukhud apni aawaz ho ki mahaul ki sadaen
ye zehn mein banti aur bigaDti hui fazaen
wo fikr mein aae zalzale hon ki dil ki halchal
tamam ehsas
sare jazbe
ye jaise patte hain
bahte pani ki sath par
jaise tairte hain
abhi yahan hain
abhi wahan hain
aur ab hain ojhal
dikhai deta nahin hai lekin
ye kuchh to hai
jo ki bah raha hai
ye kaisa dariya hai
kin pahadon se aa raha hai
ye kis samundar ko ja raha hai

ye waqt kya hai
kabhi kabhi main ye sochta hun
ki chalti gadi se ped dekho
to aisa lagta hai
dusri samt ja rahe hain
magar haqiqat mein
ped apni jagah khade hain
to kya ye mumkin hai
sari sadiyan
qatar-andar-qatar apni jagah khadi hon
ye waqt sakit ho
aur hum hi guzar rahe hon
is ek lamhe mein
sare lamhe
tamam sadiyan chhupi hui hon
na koi aainda
na guzishta
jo ho chuka hai
jo ho raha hai
jo hone wala hai
ho raha hai
main sochta hun
ki kya ye mumkin hai
sach ye ho
ki safar mein hum hain
guzarte hum hain
jise samajhte hain hum
guzarta hai
wo thama hai
guzarta hai ya thama hua hai
ikai hai ya baTa hua hai
hai munjamid
ya pighal raha hai
kise KHabar hai
kise pata hai

ye waqt kya hai
ye kaenat-e-azim
lagta hai
apni azmat se
aaj bhi mutmain nahin hai
ki lamha lamha
wasia-tar aur wasia-tar hoti ja rahi hai
ye apni banhen pasarti hai
ye kahkashaon ki ungliyon se
nae khalaon ko chhu rahi hai
agar ye sach hai
to har tasawwur ki had se bahar
magar kahin par
yaqinan aisa koi khala hai
ki jis ko
in kahkashaon ki ungliyon ne
ab tak chhua nahin hai
khala
jahan kuchh hua nahin hai
khala
ki jis ne kisi se bhi kun suna nahin hai
jahan abhi tak khuda nahin hai
wahan
koi waqt bhi na hoga
ye kaenat-e-azim
ek din
chhuegi
is an-chhue khala ko
aur apne sare wajud se
jab pukaregi
kun
to waqt ko bhi janam milega
agar janam hai to maut bhi hai
main sochta hun
ye sach nahin hai
ki waqt ki koi ibtida hai na intiha hai
ye dor lambi bahut hai
lekin
kahin to is Dor ka sira hai
abhi ye insan ulajh raha hai
ki waqt ke is qafas mein
paida hua
yahin wo pala-baha hai
magar use ilm ho gaya hai
ki waqt ke is qafas se bahar bhi ek faza hai
to sochta hai
wo puchhta hai
ye waqt kya hai

اپنا تبصرہ بھیجیں