Jis Tarah Waqt Guzarny Ky Liye Hota Hai

غزل
جس طرح وقت گزرنے کے لئے ہوتا ہے
آدمی شکل پے مرنے کے لئے ہوتا ہے
تیری آنکھوں سے ملاقات ہوئی تب یہ راز کھلا
ڈوبنے والا اُبھرنے کے لیے ہوتا ہے

عشق کیوں پیچھے ہٹا بات نبھانے سے میاں
حسن تو خیر مکرنے کے لیے ہوتا ہے

آنکھ ہوتی ہے کسی راہ کو تکنے کے لیے
دل کسی پاؤٓں پے دھرنے کے لیے ہوتا ہے

دل کی دلی کا چناؤ ہی الگ ہے صاحب
جب بھی ہوتا ہے یہ ہرنے کے لیے ہوتا ہے

کوئی بستی ہو اجڑنے کے لیے بستی ہے
کوئی مجمہ ہو بکھرنے کے لیے ہوتا ہے
Ghazal
Jis Tarah Waqt Guzarny Ky Liye Hota Hai
Admi shakal py marny ky liye hota hai

Tere ankho say mulaqat hui tab yeh raaz khola
Dobnay wala obharny ky liye hota hai

Ishq kyu pechay hata baat nebhany say mian
Hussan to khair mokarny ky liye hota hai

Ankh hoti hai kisi rah ko takne ky liye
Dil kisi payon pay dharny ky liye hota hai

Dil ki dili ka chonao hi alg hai sahib
Jab bhi hota hai yeh harnay ky liye hota hai

Koi basti ho ojarnay ky liye basti hai
Koi majma ho bikharny ka liye hota hai

اپنا تبصرہ بھیجیں