Khawabon Se Tahi Be noor Aankhen

Khawabon Se Tahi Be noor Aankhen

Khawabon Se Tahi Be noor Aankhen
Har shaam naye manzar chahen

Be chain badan piyasi rohen
Har aan naye paikar chahen

Be-bak laho
Aan dekhe sapnon ki khatir
Jane anjane raston par
Kuch naqash banana chahta hai

Banjar pamal zameen mein
Kuch phool khilana chahat hai

Youn naqash kahan ban paa-te hain
Youn phool kahan khilne wale

En badan darida rohon ke
Youn chak kahan silne wale

Be-bak laho ko hurmat ke aadab Sikhane parte hain
Tab mitti maoj mein aati hai
Tab khawab ke maani bante hain
Tab khushbo rang dekhati hai

Khawabon se tahi be noor aankhen
Har shaam naye manzar chahen
نظم
خوابوں سے تہی بے نور آنکھیں
ہر شام نئے منظر چاہیں

بے چین بدن پیاسی روحیں
ہر آن نئے پیکر چاہیں

بے باک لہو
ان دیکھے سپنوں کی خاطر
جانے ان جانے رستوں پر
کچھ نقش بنانا چاہتا ہے

بنجر پامال زمینوں میں
کچھ پھول کھلانا چاہتا ہے

یوں نقش کہاں بن پاتے ہیں
یوں پھول کہاں کھلنے والے

ان بدن دریدہ روحوں کے
یوں چاک کہاں سلنے والے

بے باک لہو کو حرمت کے آداب سکھانے پڑتے ہیں
تب مٹی موج میں آتی ہے
تب خواب کے معنی بنتے ہیں
تب خوشبو رنگ دکھاتی ہے

خوابوں سے تہی بے نور آنکھیں
ہر شام نئے منظر چاہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں