Khali Hain Magar Khud Se Bhar Jate Hain Ham Log

Khali Hain Magar Khud Se Bhar Jate Hain Ham Log

Ghazal
Khali Hain Magar Khud Se Bhar Jate Hain Ham Log
Wo hijr hua keh mare jate hain ham log

Ek shoq main aae thay mulaqat ko teri
Ek ranj main ab tujh se pare jate hain ham log

Kia dekh liye khawab main bhi aisa keh uth kar
Tasweer se bhi uski dare jate hain ham log

Ab es ko azadari samjh ya koi parsa
Dehleez per kuch phool dhare jate hain ham log

Maqtal ki mulaqat ko jata nahi koi
Are jata nahi koi tou jate hain ham log

Jana hai ali shaam ke daryaa ki janib
Seeno pe sajae shajre jate hain ham log

Khali hain magar khud se bhar jate hain ham log
Wo hijr hua keh mar jate hain ham log
غزل
خالی ہیں مگر خود سے بھرے جاتے ہیں ہم لوگ
وہ ہجر ہوا کہ مرے جاتے ہیں ہم لوگ

اک شوق میں آئے تھے ملاقات کو تیری
اک رنج میں اب تجھ سے پرے جاتے ہیں ہم لوگ

کیا دیکھ لیا خواب میں بھی ایسا کہ اٹھ کر
تصویر سے بھی اُس کی ڈرے جاتے ہیں ہم لوگ

اب اس کو ازاداری سمجھ یا کوئی پرسہ
دہلیز پر کچھ پھول دھرے جاتے ہیں ہم لوگ

مقتل کی ملاقات کو جاتا نہیں کوئی
ارے جاتا نہیں کوئی تو جاتے ہیں ہم لوگ

جانا ہے علیؔ شام کے دربار کی جانب
سینو پہ سجائے شجرے جاتے ہیں ہم لوگ

خالی ہیں مگر خود سے بھرے جاتے ہیں ہم لوگ
وہ ہجر ہوا کہ مرے جاتے ہیں ہم لوگ

اپنا تبصرہ بھیجیں