Gul Danon Mein Saje Howay Pholon Ko Mein Ne

Gul Danon Mein Saje Howay Pholon Ko Mein Ne

Gul Danon Mein Saje Howay Pholon Ko Mein Ne
Raat apni aaghosh mein le kar itna bhincha

Saare rang aur saari khushbo ang ang
Mein basi hoi hai
Sari dunya nayi hoi hai
Par mujh ko in sab rangon aur khushbuon se dar lagta hai
Jin ka muqaddar tanhai hoi ho
Ya phir aisi ruswai ho
Jis ki aag mein bars bars ke
Saje howay manzar jal jayen
Ghar jal jayen
Gul danon mein saje howay pholon ko mein ne
Raat apni aaghosh mein le kar itna bhincha
نظم
گل دانوں میں سجے ہوئے پھولوں کو میں نے
رات اپنی آغوش میں لے کر اتنا بھینچا
سارے رنگ اور ساری خوشبو انگ انگ
میں بسی ہوئی ہے
ساری دنیا نئی ہوئی ہے
پر مجھ کو ان سب رنگوں اور خوشبوؤں سے ڈر لگتا ہے
جن کا مقدر تنہائی ہوئی ہو
یا پھر ایسی رسوائی ہو
جس کی آگ میں برس برس کے
سجے ہوئے منظر جل جائیں
گھر جل جائیں
گل دانوں میں سجے ہوئے پھولوں کو میں نے
رات اپنی آغوش میں لے کر اتنا بھینچا

اپنا تبصرہ بھیجیں