Ek Tera Hijar Daimi Hai Mujhe

اک تیرا ہجر دائمی ہے مجھے
ورنہ ہر چیز عارضی ہے مجھے
ایک سایہ مرے تعاقب میں
ایک آواز ڈھونڈتی ہے مجھے
میری آنکھوں پہ دو مقدس ہاتھ
یہ اندھیرا بھی روشنی ہے مجھے
میں سخن میں ہوں اس جگہ کہ جہاں
سانس لینا بھی شاعری ہے مجھے
ان پرندوں سے بولنا سیکھا
پیڑ سے خامشی ملی ہے مجھے
میں اسے کب کا بھول بھال چکا
زندگی ہے کہ رو رہی ہے مجھے
میں کہ کاغذ کی ایک کشتی ہوں
پہلی بارش ہی آخری ہے مجھے
Ek  tera  hijar  daimi  hai  mujhe
warna  har  chiz  aarzi  hai  mujhe

ek saya mere taaqub mein
ek aawaz dhundti hai mujhe

meri aankhon pe do muqaddas hath
ye andhera bhi raushni hai mujhe

main sukhan mein hun us jagah ki jahan
sans lena bhi shairi hai mujhe

in parindon se bolna sikha
ped se khamushi mili hai mujhe

main use kab ka bhul-bhaal chuka
zindagi hai ki ro rahi hai mujhe

main ki kaghaz ki ek kashti hun
pahli barish hi aakhiri hai mujhe

اپنا تبصرہ بھیجیں