kahan aa ke rukne the raste

کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا
وہ جو مل گیا اسے یاد رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا
وہ ترے نصیب کی بارشیں کسی اور چھت پہ برس گئیں
دل بے خبر مری بات سن اسے بھول جا اسے بھول جا
میں تو گم تھا تیرے ہی دھیان میں تری آس تیرے گمان میں
صبا کہہ گئی مرے کان میں مرے ساتھ آ اسے بھول جا
کسی آنکھ میں نہیں اشک غم ترے بعد کچھ بھی نہیں ہے کم
تجھے زندگی نے بھلا دیا تو بھی مسکرا اسے بھول جا
کہیں چاک جاں کا رفو نہیں کسی آستیں پہ لہو نہیں
کہ شہید راہ ملال کا نہیں خوں بہا اسے بھول جا
کیوں اٹا ہوا ہے غبار میں غم زندگی کے فشار میں
وہ جو درد تھا ترے بخت میں سو وہ ہو گیا اسے بھول جا
تجھے چاند بن کے ملا تھا جو ترے ساحلوں پہ کھلا تھا جو
وہ تھا ایک دریا وصال کا سو اتر گیا اسے بھول جا
kahan aa ke rukne the raste kahan mod tha use bhul ja
wo jo mil gaya use yaad rakh jo nahin mila use bhul ja

wo tere nasib ki barishen kisi aur chhat pe baras gain
dil-e-be-khabar meri baat sun use bhul ja use bhul ja

main to gum tha tere hi dhyan mein teri aas tere guman mein
saba kah gai mere kan mein mere sath aa use bhul ja

kisi aankh mein nahin ashk-e-gham tere baad kuchh bhi nahin hai kam
tujhe zindagi ne bhula diya tu bhi muskura use bhul ja

kahin chaak-e-jaan ka rafu nahin kisi aastin pe lahu nahin
ki shahid-e-rah-e-malal ka nahin khun-baha use bhul ja

kyun aTa hua hai ghubar mein gham-e-zindagi ke fishaar mein
wo jo dard tha tere bakht mein so wo ho gaya use bhul ja

tujhe chand ban ke mila tha jo tere sahilon pe khila tha jo
wo tha ek dariya visal ka so utar gaya use bhul ja

اپنا تبصرہ بھیجیں