Hum Rokne Ko Paon Pare Ja Rahe Hain Yaar

Hum Rokne Ko Paon Pare Ja Rahe Hain Yaar

Hum Rokne Ko Paon Pare Ja Rahe Hain Yaar
Lekin hamaray yar lare ja rahe hain yaar

Tum inn ko ro rahe ho jo pat jhar mein jhar gaye
Aur hum jo sabz rat mein jharay ja rahe hain yaar

Hum zindagi ki habas zadda bas mein hain sawaar
Aur zulm dekh ho ke kharay ja rahe hain yaar

Woh muskura kay dekh raha hai falak se aur
Hum sharam se zameen mein garay ja rahe hain yaar

Qismat to dekh qeemti pathar hain hum magar
Logon ki jotiyun peh jaray ja rahe hain yaar

Iss ka Sketch banana hai lekin sab artist
Gum sum hain pansanlen hi gharay ja rahe hain yaar

Chhota sa khandan hai urdu ghazal ka aur
Aik aik kar ke sare baray ja rahe hain yaar

Afsoos ik sunehri kalai ke wastay
Le kar plastic ke karay ja rahe hain yaar

Aik rabt-e-raigaan hai yeh tasleem kar na len
Hum kyun fazool zid peh aaray ja rahe hain yaar

Hum rokne ko paon pare ja rahe hain yaar
Lekin hamaray yar lare ja rahe hain yaar
غزل
ہم روکنے کو پاؤں پڑے جا رہے ہیں یار
لیکن ہمارے یار لڑے جا رہے ہیں یار

تم اِن کو رو رہے ہو جو پت جھڑ میں جھڑ گئے
اور ہم جو سبز رت میں جھڑے جا رہے ہیں یار

ہم زندگی کی حبس زدہ بس میں ہیں سوار
اور ظلم دیکھ ہو کے کھڑے جا رہے ہیں یار

وہ مسکرا کے دیکھ رہا ہے فلک سے اور
ہم شرم سے زمیں میں گڑے جا رہے ہیں یار

قسمت تو دیکھ قیمتی پتھر ہیں ہم مگر
لوگوں کی جوتیوں پہ جڑے جار رہے ہیں یار

اس کا سکچ بنانا ہے لیکن سب آرٹسٹ
گم سم ہیں پنسلیں ہی گھڑے جا رہے ہیں یار

چھوٹا سا خاندان ہے اردو غزل کا اور
ایک ایک کر کے سارے بڑے جا رہے ہیں یار

افسوس اک سنہری کلائی کے واسطے
لے کر پلاسٹک کے کڑے جا رہے ہیں یار

ایک ربطِ رائگاں ہے یہ تسلیم کر نہ لیں
ہم کیوں فضول ضد پہ آڑے جا رہے ہیں یار

اپنا تبصرہ بھیجیں