Nigah Tumhari Taraf Be Sharak Chali Jaye

Nigah Tumhari Taraf Be Sharak Chali Jaye

Nigah Tumhari Taraf Be Sharak Chali Jaye
Ilaqa ghair ko jaisay sarak chali jaye

Bas itni dair ki na aashnai hai aye shakhs
To muskura keh yeh meri jhijhak chali jaye

Udaasi itni tawajah se dekhti hai mujhe
Qareeb aaye khushi yak bah yak chali jaye

Kai dinon ki ghutan ko zara sukoon milay
Khuda karay keh yeh dil ki kasak chali jaye

Yahin kahin peh mohabbat ka zikar aye ga
Yeh guftagu jo chali dour tak chali jaye

Yeh agli chout mujhe kis hisaab mein di hai
Tu chahta hai hansi se khanak chali jaye

Puranay khawab hain aur iss tarah se chubtay hain
Kisi ki aankh mein jaisay palak chali jaye

Nigah tumhari taraf be dharak chali jaye
ilaqa ghair ko jaisay sarak chali jaye
غزل
نگہ تمہاری طرف بے دھڑک چلی جائے
علاقہ غیر کو جیسے سڑک چلی جائے

بس اِتنی دیر کی نا آشنائی ہے اے شخص
تو مسکرا کہ یہ میری جھجھک چلی جائے

اُداسی اِتنی توجہ سے دیکھتی ہے مجھے
قریب آئے خوشی، یک بہ یک چلی جائے

کئی دنوں کی گھٹن کو ذرا سکون ملے
خدا کرے کہ یہ دل کی کسک چلی جائے

یہیں کہیں پہ محبت کا ذکر آئے گا
یہ گفتگو جو چلی ، دور تک چلی جائے

یہ اگلی چوٹ مجھے کس حساب میں دی ہے
تو چاہتا ہےہ ہنسی سےکھنک چلی جائے

پرانے خواب ہیں اور اِس طرح سے چبھتے ہیں
کسی کی آنکھ میں جیسے پلک چلی جائے

نگہ تمہاری طرف بے دھڑک چلی جائے
علاقہ غیر کو جیسے سڑک چلی جائے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں