Kisi ko ghar mila hisse mein ya koi dukan aai

کسی کو گھر ملا حصے میں یا کوئی دکاں آئی
میں گھر میں سب سے چھوٹا تھا مرے حصے میں ماں آئی
یہاں سے جانے والا لوٹ کر کوئی نہیں آیا
میں روتا رہ گیا لیکن نہ واپس جا کے ماں آئی
ادھورے راستے سے لوٹنا اچھا نہیں ہوتا
بلانے کے لیے دنیا بھی آئی تو کہاں آئی
کسی کو گاؤں سے پردیس لے جائے گی پھر شاید
اڑاتی ریل گاڑی ڈھیر سارا پھر دھواں آئی
مرے بچوں میں ساری عادتیں موجود ہیں میری
تو پھر ان بد نصیبوں کو نہ کیوں اردو زباں آئی
قفس میں موسموں کا کوئی اندازہ نہیں ہوتا
خدا جانے بہار آئی چمن میں یا خزاں آئی
گھروندے تو گھروندے ہیں چٹانیں ٹوٹ جاتی ہیں
اڑانے کے لیے آندھی اگر نام و نشاں آئی
کبھی اے خوش نصیبی میرے گھر کا رخ بھی کر لیتی
ادھر پہنچی ادھر پہنچی یہاں آئی وہاں آئی
Kisi Ko Ghar Mila Hisse Mein Ya Koi Dukan Aai
main ghar mein sab se chhota tha mere hisse mein man aai
 
yahan se jaane wala laut kar koi nahin aaya
main rota rah gaya lekin na wapas ja ke man aai
 
adhure raste se lautna achchha nahin hota
bulane ke liye duniya bhi aai to kahan aai
 
kisi ko ganw se pardes le jaegi phir shayad
udati rail-gadi dher sara phir dhuan aai
 
mere bachchon mein sari aadaten maujud hain meri
to phir in bad-nasibon ko na kyun urdu zaban aai
 
qafas mein mausamon ka koi andaza nahin hota
khuda jaane bahaar aai chaman mein ya khizan aai
 
gharaunde to gharaunde hain chatanen tut jati hain
udane ke liye aandhi agar nam-o-nishan aai
 
kabhi ai khush-nasibi mere ghar ka rukh bhi kar leti
idhar pahunchi udhar pahunchi yahan aai wahan aai

اپنا تبصرہ بھیجیں