Mein Dekh Lo Jo Kabhi Usski Chasham-E-Tar Ki

Mein Dekh Lo Jo Kabhi Usski Chasham-E-Tar Ki

Mein Dekh Lo Jo Kabhi Usski Chasham-E-Tar Ki Taraf
Badan ka sara lahoo daorta hai sar ki taraf

Meri taraf mutwajjah tou kyu nahi hota
Tera tu khair se rujhaan bhi hai shar ki taraf

Mein ab ghubaar mein hoon aur intezaar mein hoon
Hawa ka rukh ho kisi waqt uss ke ghar ki taraf

Aik aisi dhoop pari dasht-e-raigani mein
Ke saya chor ke bhaga mujhe shajar ki taraf

Mein dekh lo jo kabhi usski chasham-e-tar ki taraf
Badan ka sara lahoo daorta hai sar ki taraf
غزل
میں دیکھ لو جو کبھی اُس کی چشمِ تر کی طرف
بدن کا سارا لہو دوڑتا ہےسر کی طرف

میری طرف متوجہ تُو کیو نہیں ہوتا
تیرا تو خیر سے رُجحان بھی ہے شر کی طرف

میں اب غبار میں ہوں اور انتظار میں ہوں
ہوا کا رخ ہو کسی وقت اُس کے گھر کی طرف

ایک ایسی دھوپ پڑی دشتِ رائیگانی میں
کے سایہ چھوڑ کے بھاگا مجھے شجر کی طرف

میں دیکھ لو جو کبھی اُس کی چشمِ تر کی طرف
بدن کا سارا لہو دوڑتا ہےسر کی طرف
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں