Ab Bas Usky Dil Ky Andar Dakhil Hona Baki Hai

غزل
اب بس اُس کے دل کے اندر داخل ہونا باقی ہے
چھے دروازے توڑ چکا ہوں اک دروازہ باقی ہے

دولت، شہرت ،بیوی، بچے، اچھا گھر، اور اچھے دوست
کچھ تو ہے جو ان کے بعد بھی حاصل کرنا باقی ہے

میں برسوں سے کھول رہا ہوں اک عورت کی ساڑھی کو
آدھی دنیا گھوم چکا ہوں آدھی دنیا باقی ہے

کبھی کبھی تو دل کرتا ہے چلتی ریل سے کود پڑوں
پھر کہتا ہوں پاگل اب تو تھوڑا راستہ باقی ہے

اُس کی خاطر بازاروں میں بھیڑ بھی ہے اور رونق بھی
میں گم ہونے والا ہوں بس ہاتھ چھڑانا باقی ہے 
Ghazal
Ab Bas Usky Dil Ky Andar Dakhil Hona Baki Hai
Chahy darwazay tor chuka hun, ek darwaza baki hai

Dollat ,shohrat, bewi , bachy , acha ghar ,aur achay dost
Kuch to hai jo in ky baad bhi hasil karna baki hai

Main barso say khool raha hun ek aourt ki sarai ko
Aadhi dunyia ghoom chuka hun aadhi baki hai

Kabhi kabhi to dil karta hai chalti rail say kood parho
Phir kehta hun pagal ab to thora rasta baki hai

Us ki khatir bazaro main bhear bhi hai aur ronq bhi
Main gum honay wala hun bas hath churana baki hai

اپنا تبصرہ بھیجیں