Shola Tha Jal Bujha Hun Hawaen Mujhe Na Do

شعلہ تھا جل بجھا ہوں ہوائیں مجھے نہ دو
میں کب کا جا چکا ہوں صدائیں مجھے نہ دو
جو زہر پی چکا ہوں تمہیں نے مجھے دیا
اب تم تو زندگی کی دعائیں مجھے نہ دو
یہ بھی بڑا کرم ہے سلامت ہے جسم ابھی
اے خسروان شہر قبائیں مجھے نہ دو
ایسا نہ ہو کبھی کہ پلٹ کر نہ آ سکوں
ہر بار دور جا کے صدائیں مجھے نہ دو
کب مجھ کو اعتراف محبت نہ تھا فرازؔ
کب میں نے یہ کہا ہے سزائیں مجھے نہ دو
Shoala Tha Jal Bujha Hun Hawaen Mujhe Na Do
main kab ka ja chuka hun sadaen mujhe na do
 
jo zahr pi chuka hun tumhin ne mujhe diya
ab tum to zindagi ki duaen mujhe na do
 
ye bhi bada karam hai salamat hai jism abhi
ai khusrawan-e-shahr qabaen mujhe na do
 
aisa na ho kabhi ki palat kar na aa sakun
har bar dur ja ke sadaen mujhe na do
 
kab mujh ko e’tiraf-e-mohabbat na tha ‘faraaz’
kab main ne ye kaha hai sazaen mujhe na do

اپنا تبصرہ بھیجیں