Yeh Qarz-E-Kaj-Kulahi Kab Talak Ada Hoga

Yeh Qarz-E-Kaj-Kulahi Kab Talak Ada Hoga

Yeh Qarz-E-Kaj-Kulahi Kab Talak Ada Hoga
Tabah ho tou gaye hain ab aur kya hoga

Yahan tak aai hai biphraye howay lahu ki sada
Hamare shehar mein kia kuch nahi howa hoga

Ghubar-e-koocha-e-wada bikharta jata hai
Ab aagaye apne bikharne ka silsila hoga

Sada lagai tou pursan-e-haal koi na tha
Guman tha keh har ek shakhs ham nawa hoga

Kabhi kabhi tou wo aankhen bhi sochti hongi
Bicharr ke rang se khawabon ka haal kia hoga

Howa hai youn bhi keh ek umr apne ghar na gaye
Yeh jaantay thay koi rah dekhta hoga

Abhi to dhund mein liptay howay hain sab manzar
Tum aaogaye tou yeh mousam badal chukka hoga

Yeh qarz-e-kaj-kulahi kab talak ada hoga
Tabah ho tou gaye hain ab aur kya hoga
غزل
یہ قرض کج کلہی کب تلک ادا ہوگا
تباہ ہو تو گئے ہیں اب اور کیا ہوگا

یہاں تک آئی ہے بپھرے ہوئے لہو کی صدا
ہمارے شہر میں کیا کچھ نہیں ہوا ہوگا

غبار کوچہ وعدہ بکھرتا جاتا ہے
اب آگے اپنے بکھرنے کا سلسلہ ہوگا

صدا لگائی تو پرسان حال کوئی نہ تھا
گمان تھا کہ ہر اک شخص ہم نوا ہوگا

کبھی کبھی تو وہ آنکھیں بھی سوچتی ہوں گی
بچھڑ کے رنگ سے خوابوں کا حال کیا ہوگا

ہوا ہے یوں بھی کہ اک عمر اپنے گھر نہ گئے
یہ جانتے تھے کوئی راہ دیکھتا ہوگا

ابھی تو دھند میں لپٹے ہوئے ہیں سب منظر
تم آو گے تو یہ موسم بدل چکا ہوگا

یہ قرض کج کلہی کب تلک ادا ہوگا
تباہ ہو تو گئے ہیں اب اور کیا ہوگا

اپنا تبصرہ بھیجیں