Ham Log Na Thay Aise

Ham Log Na Thay Aise

Ham Log Na Thay Aise
Jaise hain nazar atay

Aye waqt gawhi day
Yeh sheher na tha aisa

Yeh rog na thay aise
Dewar na thay rastay

Zindan na thi basti
Azar na thay rishtay

Khaljan na thi hasti
Youn mout na thi sasti

Yeh jo aaj soorat hai
Halat na thay aise

Youn gair na thay mosam
Din raat na thay aise

Tafriq na thi aisi
Sanjog na thay aise

Aye waqt gawhi day
Ham log na thay aise
غزل
ہم لوگ نہ تھے ایسے
جیسے ہیں نظر آتے

اے وقت گواہی دے
یہ شہر نہ تھا ایسا

یہ روگ نہ تھے ایسے
دیوار نہ تھے رستے

زنداں نہ تھی بستی
آزار نہ تھے رشتے

خلجان نہ تھی ہستی
یوں موت نہ تھی سستی

یہ آج جو صورت ہے
حالات نہ تھے ایسے

یوں غیر نہ تھے موسم
دن رات نہ تھے ایسے

تفریق نہ تھی ایسی
سنجوگ نہ تھے ایسے

اے وقت گواہی دے
ہم لوگ نہ تھے ایسے

اپنا تبصرہ بھیجیں