Nahi nigah mein manzil to justuju hi sa

نہیں نگاہ میں منزل تو جستجو ہی سہی
نہیں وصال میسر تو آرزو ہی سہی
نہ تن میں خون فراہم نہ اشک آنکھوں میں
نماز شوق تو واجب ہے بے وضو ہی سہی
کسی طرح تو جمے بزم مے کدے والو
نہیں جو بادہ و ساغر تو ہاؤ ہو ہی سہی
گر انتظار کٹھن ہے تو جب تلک اے دل
کسی کے وعدۂ فردا کی گفتگو ہی سہی
دیار غیر میں محرم اگر نہیں کوئی
تو فیضؔ ذکر وطن اپنے روبرو ہی سہی
nahin nigah mein manzil to justuju hi sahi
nahin visal mayassar to aarzu hi sahi

na tan mein khun faraham na ashk aankhon mein
namaz-e-shauq to wajib hai be-wazu hi sahi

kisi tarah to jame bazm mai-kade walo
nahin jo baada-o-saghar to haw-hu hi sahi

gar intizar kathin hai to jab talak ai dil
kisi ke wada-e-farda ki guftugu hi sahi

dayar-e-ghair mein mahram agar nahin koi
to ‘faiz’ zikr-e-watan apne ru-ba-ru hi sahi

اپنا تبصرہ بھیجیں