Dayen Bazo Mein Gara Teer Nahi Khainch Saka

Dayen Bazo Mein Gara Teer Nahi Khainch Saka

Dayen Bazo Mein Gara Teer Nahi Khainch Saka
Iss liye khol se shamsheer nahi khainch saka

Shor itna tha keh aawaz bhi dabay mein rahi
Bher itni thi keh zanjeer nahi khainch saka

Har nazar se nazar andaaz shuda manzar hoon
Woh madari hoon jo rah geer nahi khainch saka

Mein ne mehnat se hatheli peh lakeren khainchi
Woh jinhe katib-e-taqdeer nahi khainch saka

Mein tasveer kashi kar ke jawan ki awlad
Unn ke bachpan ki tasaveer nahi khainch saka

Mujh pe ek hijr mussalat hai hamesha ke liye
Aisa jin hai keh koi peer nahi khainch saka

Tum peh kia khaak asar hoga mere Sheron ka
Tum ko to meer taqi meer nahi khainch saka

Dayen bazo mein gara teer nahi khainch saka
Iss liye khol se shamsheer nahi khainch saka
غزل
دائیں بازو میں گڑا تیر نہیں کھینچ سکا
اِس لئے خول سے شمشیر نہیں کھینچ سکا

شور اِتنا تھا کہ آواز بھی ڈبے میں رہی
بھیڑ اِتنی تھی کہ زنجیر نہیں کھینچ سکا

ہر نظر سے نظر انداز شدہ منظر ہوں
وہ مداری ہوں جو رہ گیر نہیں کھینچ سکا

میں نے محنت سے ہتھیلی پہ لکیریں کھینچی
وہ جنہیں کاتب تقدیر نہیں کھینچ سکا

میں تصویر کشی کر کےجواں کی اولاد
اُن کے بچپن کی تصایر نہیں کھینچ سکا

مجھ پہ اک ہجر مسلط ہے ہمیشہ کے لئے
ایسا جن ہے کہ کوئی پیر نہیں کھینچ سکا

تم پہ کیا خاک اثر ہوگا مرے شعروں کا
تم کو تو میر تقی میر نہیں کھینچ سکا

دائیں بازو میں گڑا تیر نہیں کھینچ سکا
اِس لئے خول سے شمشیر نہیں کھینچ سکا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں