Ab Mere Shane Se Lag Kar Kis Liye Roti Ho

نظم:تجدید
اب مرے شانے سے لگ کر کس لیے روتی ہو تم
یاد ہے تم نے کہا تھا
”جب نگاہوں میں چمک ہو
لفظ جذبوں کے اثر سے کانپتے ہوں اور تنفس
اس طرح الجھیں کہ جسموں کی تھکن خوشبو بنے
تو وہ گھڑی عہد وفا کی ساعت نایاب ہے
وہ جو چپکے سے بچھڑ جاتے ہیں لمحے ہیں مسافت
جن کی خاطر پاؤں پر پہرے بٹھاتی ہے
نگاہیں دھند کے پردوں میں ان کو ڈھونڈتی ہیں
اور سماعت ان کی میٹھی نرم آہٹ کے لیے
دامن بچھاتی ہے”
اور وہ لمحہ بھی تم کو یاد ہوگا
جب ہوائیں سرد تھیں اور شام کے میلے کفن پر ہاتھ رکھ کر
تم نے لفظوں اور تعلق کے نئے معنی بتائے تھے، کہا تھا
ہر گھڑی اپنی جگہ پر ساعت نایاب ہے
حاصل عمر گریزاں ایک بھی لمحہ نہیں
لفظ دھوکہ ہیں کہ ان کا کام ابلاغ معانی کے علاوہ کچھ نہیں
وقت معنی ہے جو ہر لحظہ نئے چہرے بدلتا ہے
جانے والا وقت سایہ ہے
کہ جب تک جسم ہے یہ آدمی کے ساتھ چلتا ہے
یاد مثل نطق پاگل ہے کہ اس کے لفظ معنی سے تہی ہیں
یہ جسے تم غم اذیت درد آنسو
دکھ وغیرہ کہہ رہے ہو
ایک لمحاتی تأثر ہے تمہارا وہم ہے
تم کو میرا مشورہ ہے، بھول جاؤ تم سے اب تک
جو بھی کچھ میں نے کہا ہے”
اب مرے شانے سے لگ کر کس لیے روتی ہو تم!
Poem:Tajdide
Ab Mere Shane Se Lag Kar Kis Liye Roti Ho Tum
yaad hai tum ne kaha tha
jab nigahon mein chamak ho
lafz jazbon ke asar se kanpte hon aur tanaffus
is tarah uljhen ki jismon ki thakan khushbu bane
to wo ghadi ahd-e-wafa ki saat-e-nayab hai
 
wo jo chupke se bichhad jate hain lamhe hain masafat
jin ki khatir panw par pahre bithati hai
nigahen dhund ke pardon mein un ko dhundti hain
aur samaat un ki mithi narm aahat ke liye
daman bichhati hai
 
aur wo lamha bhi tum ko yaad hoga
jab hawaen sard thin aur sham ke maile kafan par hath rakh kar
tum ne lafzon aur talluq ke nae mani batae the, kaha tha
har ghadi apni jagah par saat-e-nayab hai
hasil-e-umr-e-gurezan ek bhi lamha nahin
lafz dhoka hain ki un ka kaam iblagh-e-maani ke alawa kuchh nahin
waqt mani hai jo har lahza nae chehre badalta hai
jaane wala waqt saya hai
 
ki jab tak jism hai ye aadmi ke sath chalta hai
yaad misl-e-nutq pagal hai ki is ke lafz mani se tahi hain
ye jise tum gham aziyyat dard aansu
dukh waghaira kah rahe ho
 
ek lamhati tassur hai tumhaara wahm hai
tum ko mera mashwara hai, bhul jao tum se ab tak
jo bhi kuchh main ne kaha hai
ab mere shane se lag kar kis liye roti ho tum!

اپنا تبصرہ بھیجیں