Hath Khali hain tere shahr se jate jate

ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے
جان ہوتی تو مری جان لٹاتے جاتے
اب تو ہر ہاتھ کا پتھر ہمیں پہچانتا ہے
عمر گزری ہے ترے شہر میں آتے جاتے
اب کے مایوس ہوا یاروں کو رخصت کر کے
جا رہے تھے تو کوئی زخم لگاتے جاتے
رینگنے کی بھی اجازت نہیں ہم کو ورنہ
ہم جدھر جاتے نئے پھول کھلاتے جاتے
میں تو جلتے ہوئے صحراؤں کا اک پتھر تھا
تم تو دریا تھے مری پیاس بجھاتے جاتے
مجھ کو رونے کا سلیقہ بھی نہیں ہے شاید
لوگ ہنستے ہیں مجھے دیکھ کے آتے جاتے
ہم سے پہلے بھی مسافر کئی گزرے ہوں گے
کم سے کم راہ کے پتھر تو ہٹاتے جاتے
hath khali hain tere shahr se jate jate
jaan hoti to meri jaan lutate jate
ab to har hath ka patthar hamein pahchanta hai
umr guzri hai tere shahr mein aate jate
ab ke mayus hua yaron ko rukhsat kar ke
ja rahe the to koi zakhm lagate jate
rengne ki bhi ijazat nahin hum ko warna
hum jidhar jate nae phul khilate jate
main to jalte hue sahraon ka ek patthar tha
tum to dariya the meri pyas bujhate jate
mujh ko rone ka saliqa bhi nahin hai shayad
log hanste hain mujhe dekh ke aate jate
hum se pahle bhi musafir kai guzre honge
kam se kam rah ke patthar to hatate jate

اپنا تبصرہ بھیجیں