Nikaltay Jayen Badan Se Usay Jaga Deye Jayen

Nikaltay Jayen Badan Se Usay Jaga Deye Jayen

Nikaltay Jayen Badan Se Usay Jaga Deye Jayen
Woh chahta hai keh bas woh ho aur hum hata diye jayen

Kisi ki neend hamein dastyab ho ik shab
Hamaray khwab kisi aur ko dikha deye jayen

Tou kehh raha hai jo pochay tera pata de den
Hum itni bhair mein kis kis ko rasta deye jayen

Rayis bethay hain marzi se uss ki rah mein yun
Faqeer jaisay kahi daant kar bitha deye jayen

Yeh dil bharkta ziyada hai kam dharkta hai
Tou saans rok nah len kyun usay hawa deye jayen

Hamaray gaal kuch aisay safedi mayal hain
Keh jaisay kapron ke dho dho ke rang uray deye jayen

Sarak kinaray kharay goortay hain logon ko
Yeh pair kyu nah kisi kaam par laga deye jayen

Utha ke band kaye jayen khul ke sochtay log
Jo khwab dekh rahe hain woh sab sala deye jayen

Mujh aisay raigaan ajsaam dhaye jayen umair
Aur unn ki khak mila kar deye bana deye jayen

Nikaltay jayen badan se usay jaga deye jayen
Woh chahta hai keh bas woh ho aur hum hata diye jayen
غزل
نکلتے جائیں بدن سے اُسے جگا دئیے جائیں
وہ چاہتا ہے کہ بس وہ ہو اور ہم ہٹا دئیے جائیں

کسی کی نیند ہمیں دستیاب ہو اک شب
ہمارے خواب کسی اور کو دکھا دئیے جائیں

تو کہہ رہا ہے جو پوچھے ترا پتہ دے دیں
ہم اِتنی بھیڑ میں کس کس کو راستہ دئیے جائیں

رئیس بیٹھے ہیں مرضی سے اُس کی راہ میں یوں
فقیر جیسے کہیں ڈانٹ کر بٹھا دئیے جائیں

یہ دل بھڑکتا زیادہ ہے کم دھڑکتا ہے
تو سانس روک نہ لیں کیوں اُسے ہوا دئیے جائیں

ہمارے گال کچھ ایسے سفیدی مائل ہیں
کہ جیسے کپڑوں کے دھو دھو کے رنگ اُڑا دئیے جائیں

سڑک کنارے کھڑے گورتے ہیں لوگوں کو
یہ پیڑ کیوں نہ کسی کام پر لگا دئیے جائیں

اُٹھا کے بند کیے جائیں کھل کے سوچتے لوگ
جو خواب دیکھ رہے ہیں وہ سب سلا دئیے جائیں

مجھ ایسے رائگاں اجسام ڈھائے جائے عمیر
اور ان کی خاک ملا کر دیے بنا دئیے جائیں

نکلتے جائیں بدن سے اُسے جگا دئیے جائیں
وہ چاہتا ہے کہ بس وہ ہو اور ہم ہٹا دئیے جائیں

اپنا تبصرہ بھیجیں