Ye To Nahin Ki Tum Se Mohabbat Nahin Mujhe

شاعر:احسان دانش
غزل
یہ تو نہیں کہ تم سے محبت نہیں مجھے
اتنا ضرور ہے کہ شکایت نہیں مجھے

میں ہوں کہ اشتیاق میں سر تا قدم نظر
وہ ہیں کہ اک نظر کی اجازت نہیں مجھے

آزادئی گناہ کی حسرت کے ساتھ ساتھ
آزادئی خیال کی جرأت نہیں مجھے

دوبھر ہے گرچہ جور عزیزاں سے زندگی
لیکن خدا گواہ شکایت نہیں مجھے

جس کا گریز شرط ہو تقریب دید میں
اس ہوش اس نظر کی ضرورت نہیں مجھے

جو کچھ گزر رہی ہے غنیمت ہے ہم نشیں
اب زندگی پہ غور کی فرصت نہیں مجھے

میں کیوں کسی کے عہد وفا کا یقیں کروں
اتنی شدید غم کی ضرورت نہیں مجھے

سجدے مرے خیال جزا سے ہیں ماورا
مقصود بندگی سے تجارت نہیں مجھے

میں اور دے سکوں نہ ترے غم کو زندگی
ایسی تو زندگی سے محبت نہیں مجھے

احسانؔ کون مجھ سے سوا ہے مرا عدو
اپنے سوا کسی سے شکایت نہیں مجھے
 
Ghazal
Ye To Nahin Ki Tum Se Mohabbat Nahin Mujhe
Itna zarur hai ki shikayat nahin mujhe

Main hun ki ishtiyaq mein sar-ta-qadam nazar
Wo hain ki ek nazar ki ijazat nahin mujhe

Aazadi-e-gunah ki hasrat ke sath sath
Aazadi-e-khayal ki jurat nahin mujhe

Dubhar hai garche jaur-e-azizan se zindagi
Lekin khuda-gawah shikayat nahin mujhe

Jis ka gurez shart ho taqrib-e-did mein
Is hosh is nazar ki zarurat nahin mujhe

Jo kuchh guzar rahi hai ghanimat hai ham-nashin
Ab zindagi pe ghaur ki fursat nahin mujhe

Main kyun kisi ke ahd-e-wafa ka yaqin karun
Itni shadid gham ki zarurat nahin mujhe

Sajde mere khayal-e-jaza se hain mawara
Maqsud bandagi se tijarat nahin mujhe

Main aur de sakun na tere gham ko zindagi
Aisi to zindagi se mohabbat nahin mujhe

‘Ehsan’ kaun mujh se siwa hai mera adu
Apne siwa kisi se shikayat nahin mujhe

اپنا تبصرہ بھیجیں