Wahi Narm Lahja

نظم
وہی نرم لہجہ
جو اتنا ملائم ہے جیسے
دھنک گیت بن کے سماعت کو چھونے لگی ہو
شفق نرم کومل سروں میں کوئی پیار کی بات کہنے چلی ہو
کس قدر رنگ و آہنگ کا کس قدر خوب صورت سفر

وہی نرم لہجہ
کبھی اپنے مخصوص انداز میں مجھ سے باتیں کرے گا
تو ایسا لگے
جیسے ریشم کے جھولے پہ کوئی مدھر گیت ہلکورے لینے لگا ہو

وہی نرم لہجہ
کسی شوخ لمحے میں اس کی ہنسی بن کے بکھرے
تو ایسا لگے
جیسے قوس قزح نے کہیں پاس ہی اپنی پازیب چھنکائی ہے
ہنسی کو وہ رم جھم
کہ جیسے فضا میں بنفشی چمکدار بوندوں کے گھنگھرو چھنکنے لگے ہوں
کہ پھر
اس کی آواز کا لمس پا کے
ہواؤں کے ہاتھوں میں ان دیکھے کنگن کھنکنے لگے ہوں

وہی نرم لہجہ مجھے چھیڑنے پر جب آئے
تو ایسا لگے گا
جیسے ساون کی چنچل ہوا
سبز پتوں کے جھانجھن پہن
سرخ پھولوں کی پائل بجاتی ہوئی
میرے رخسار کو
گاہے گاہے شرارے سے چھونے لگے
میں جو دیکھوں پلٹ کے تو وہ
بھاگ جائے مگر
دور پیڑوں میں چھپ کر ہنسے
اور پھر ننھے بچوں کی مانند خوش ہو کے تالی بجانے لگے

وہی نرم لہجہ
کہ جس نے مرے زخم جاں پہ ہمیشہ شگفتہ گلابوں کی شبنم رکھی ہے
بہاروں کے پہلے پرندے کی مانند ہے
جو سدا آنے والے نئے سکھ کے موسم کا قاصد بنا ہے
اسی نرم لہجے نے پھر مجھ کو آواز دی ہے

Nazam

Wahi Narm Lahja
Jo itna mulaem hai jaise
Dhanak git ban ke samaat ko chhune lagi ho
Shafaq narm komal suron mein koi pyar ki baat kahne chali ho
Kis qadar rang-o-ahang ka kis qadar khubsurat safar

Wahi narm lahja
Kabhi apne makhsus andaz mein mujh se baaten karega
To aisa lage
Jaise resham ke jhule pe koi madhur git halkore lene laga ho

Wahi narm lahja
Kisi shokh lamhe mein us ki hansi ban ke bikhre
To aisa lage
Jaise qaus-e-quzah ne kahin pas hi apni pazeb chhankai hai
Hansi ko wo rim-jhim
Ki jaise faza mein banafshi chamakdar bundon ke ghunghru chhanakne lage hon
Keh phir
Us ki aawaz ka lams pa ke
Hawaon ke hathon mein an-dekhe kangan khanakne lage hon

Wahi narm lahja mujhe chhedne par jab aae
To aisa lagega
Jaise sawan ki chanchal hawa
Sabz patton ke jhanjhan pahan
Surkh phulon ki pael bajati hui
Mere rukhsar ko
Gahe gahe sharare se chhune lage
Main jo dekhun palaT ke to wo
Bhag jae magar
Dur pedon mein chhup kar hanse
Aur phir nanhe bachchon ki manind khush ho ke tali bajaane lage

Wahi narm lahja
Ki jis ne mere zakhm-e-jaan pe hamesha shagufta gulabon ki shabnam rakhi hai
Bahaaron ke pahle parinde ki manind hai
Jo sada aane wale nae sukh ke mausam ka qasid bana hai
Usi narm lahje ne phir mujh ko aawaz di hai

اپنا تبصرہ بھیجیں