Main Dil Pe Jabr Karunga

میں دل پہ جبر کروں گا تجھے بھلا دوں گا
مروں گا خود بھی تجھے بھی کڑی سزا دوں گا
یہ تیرگی مرے گھر کا ہی کیوں مقدر ہو
میں تیرے شہر کے سارے دیئے بجھا دوں گا
ہوا کا ہاتھ بٹاؤں گا ہر تباہی میں
ہرے شجر سے پرندے میں خود اڑا دوں گا
وفا کروں گا کسی سوگوار چہرے سے
پرانی قبر پہ کتبہ نیا سجا دوں گا
اسی خیال میں گزری ہے شام درد اکثر
کہ درد حد سے بڑھے گا تو مسکرا دوں گا
تو آسمان کی صورت ہے گر پڑے گا کبھی
زمیں ہوں میں بھی مگر تجھ کو آسرا دوں گا
بڑھا رہی ہیں مرے دکھ نشانیاں تیری
میں تیرے خط تری تصویر تک جلا دوں گا
بہت دنوں سے مرا دل اداس ہے محسنؔ
اس آئینے کو کوئی عکس اب نیا دوں گا
Main Dil Pe Jabr Karunga Tujhe Bhula Dunga
marunga khud bhi tujhe bhi kadi saza dunga
 
ye tirgi mere ghar ka hi kyun muqaddar ho
main tere shahar ke sare diye bujha dunga
 
hawa ka hath bataunga har tabahi mein
hare shajar se parinde main khud uda dunga
 
wafa karunga kisi sogwar chehre se
purani qabr pe katba naya saja dunga
 
isi khayal mein guzri hai sham-e-dard akasr
ki dard had se badhega to muskura dunga
 
tu aasman ki surat hai gar padega kabhi
zamin hun main bhi magar tujh ko aasra dunga
 
badha rahi hain mere dukh nishaniyan teri
main tere khat teri taswir tak jala dunga
 
bahut dinon se mera dil udas hai ‘mohsin’
is aaine ko koi aks ab naya dunga

اپنا تبصرہ بھیجیں