Hakim Teri Sipah Ka Hissa Nahi Hoon

Hakim Teri Sipah Ka Hissa Nahi Hoon

Hakim Teri Sipah Ka Hissa Nahi Hoon Mein
Zulmat ki bargaah ka hissa nahi hoon mein

Dil tornay ki rasam hai har so urooj par
Sada shukar iss gunah ka hissa nahi hoon mein

Jis se sukhan ke shahr mein shuhrat naseeb ho
Rasman bhi rasam-o-rah ka hissa nahi hoon mein

Chaaron tarf hain senkrun nazren gari hoi
Bas ik teri nigah ka hissa nahi hoon mein

Matlab nah ho to daor ka bhi rabta nah ho
Aisi garz ki chaah ka hissa nahi hoon mein

Chhota sa ik chiragh hoon lekin yeh zaam hai
Khauf-e-shab-e-siyah ka hissa nahi hoon mein

Hakim teri sipah ka hissa nahi hoon mein
Zulmat ki bargaah ka hissa nahi hoon mein
غزل
حاکم تری سپاہ کا حصہ نہیں ہوں میں
ظلمت کی بارگاہ کا حصہ نہیں ہوں میں

دل توڑنے کی رسم ہے ہر سو عروج پر
صد شکر اِس گناہ کا حصہ نہیں ہوں میں

جس سے سخن کے شہر میں شہرت نصیب ہو
رسماً بھی رسم و راہ کا حصہ نہیں ہوں میں

چاروں طرف ہیں سینکڑوں نظریں گڑی ہوئی
بس اک تری نگاہ کا حصہ نہیں ہوں میں

مطلب نہ ہو تو دور کا بھی رابطہ نہ ہو
ایسی غرض کی چاہ کا حصہ نہیں ہوں میں

چھوٹا سا اک چراغ ہوں لیکن یہ زعم ہے
خوفِ شبِ سیاہ کا حصہ نہیں ہوں میں

حاکم تری سپاہ کا حصہ نہیں ہوں میں
ظلمت کی بارگاہ کا حصہ نہیں ہوں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں