Yeh Zulm Mujh Se Nahi Ho Saka Nahi Kiya Hai

Ghazal

Yeh Zulm Mujh Se Nahi Ho Saka Nahi Kiya Hai
Khayal main bhi use be-reda nahi kiya hai

Main aik shakhs ko imaan janta hun tu kia
Khuda ky naam pe logo ne kia nahi kiya hai

Ise leya main roya nahi becharte same
Tujhe rawana kiya hai judaa nahi kiya hai

Yeh badtameez agar tujh se dar rahe hain tu phir
Tujhe bigad ke main ne bura to nahi kiya hai

Yeh zulm mujh se nahi ho saka nahi kiya hai
Khayal main bhi use be-reda nahi kiya hai

غزل
یہ ظلم مجھ سے نہیں ہوسکا نہیں کیا ہے
خیال میں بھی اُسے بےریدا نہیں کیا ہے

میں ایک شخص کو ایمان جانتا ہوں تو کیا
خدا کے نام پہ لوگوں نے کیا نہیں کیا ہے

اسی لیے تو میں رویا نہیں بچھڑتے سمے
تجھے روانہ کیا ہے جدا نہیں کیا ہے

یہ بد تمیز اگر تجھ سے ڈر رہے ہیں تو پھر
تجھے بگاڑ کے میں نے برا نہیں کیا ہے

یہ ظلم مجھ سے نہیں ہوسکا نہیں کیا ہے
خیال میں بھی اُسے بےریدا نہیں کیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں