Mere Raste Mein Ek Mod Tha

میرے رستے میں اک موڑ تھا
اور اس موڑ پر
پیڑ تھا ایک برگد کا
اونچا
گھنا

جس کے سائے میں میرا بہت وقت بیتا ہے
لیکن ہمیشہ یہی میں نے سوچا
کہ رستے میں یہ موڑ ہی اس لیے ہے
کہ یہ پیڑ ہے

عمر کی آندھیوں میں
وہ پیڑ ایک دن گر گیا ہے
موڑ لیکن ہے اب تک وہیں کا وہیں
دیکھتا ہوں تو
آگے بھی رستے میں
بس موڑ ہی موڑ ہیں
پیڑ کوئی نہیں

راستوں میں مجھے یوں تو مل جاتے ہیں مہرباں
پھر بھی ہر موڑ پر
پوچھتا ہے یہ دل
وہ جو اک چھاؤں تھی
کھو گئی ہے کہاں
Mere Raste Mein Ek Mod Tha
aur us mod par
ped tha ek bargad ka
uncha
ghana

jis ke sae mein mera bahut waqt bita hai
lekin hamesha yahi main ne socha
ki raste mein ye mod hi is liye hai
ki ye ped hai

umr ki aandhiyon mein
wo ped ek din gir gaya hai
mod lekin hai ab tak wahin ka wahin
dekhta hun to
aage bhi raste mein
bas mod hi mod hain
ped koi nahin

raston mein mujhe yun to mil jate hain
mehrban
phir bhi har mod par
puchhta hai ye dil
wo jo ek chhanw thi
kho gai hai kahan

اپنا تبصرہ بھیجیں