Yeh Naqash Hum Jo Sar| Ghazal Iftikhar Arif

Yeh Naqash Hum Jo Sar| Ghazal Iftikhar Arif

Yeh Naqash Hum Jo Sar-E-Loh-E-Jaan Banate Hain
Koi banata hai hum khud kahan banate hain

Yeh sar yeh taal le kuch nahi bajaz taufeeq
Tou phir yeh kia hai keh hum armaghan banate hain

Samandar us ka hawa us ki aasman us ka
Wo jis ke azan se hum kashtiyan banate hain

Zameen ki dhoop zamane ki dhoop zehen ki dhoop
Hum aisi dhoop mein bhi saibaan banate hain

Khud apni khaak se karte hain moaj-e-noor kashed
Phir us se aik nayi kehkishaan banate hain

Kahani jab nazar aati hai khatm hoti hoi
Wahin se aik nayi dastaan banate hain

Khuli fizza mein khush aawaz tairoo ke hujoom
Magar wo log jo teer-o-sanaa banate hain

Palat ke aaye ghareb-ul-watan palatna tha
Yeh dekhna hai keh ab ghar kahan banate hain

Yeh naqash hum jo sar-e-loh-e-jaan banate hain
Koi banata hai hum khud kahan banate hain
غزل
یہ نقش ہم جو سر لوح جاں بناتے ہیں
کوئی بناتا ہے ہم خود کہاں بناتے ہیں

یہ سر یہ تال لے کچھ نہیں بجز توفیق
تو پھر یہ کیا ہے کہ ہم ارمغاں بناتے ہیں

سمندر اس کا ہوا اس کی آسماں اُس کا
وہ جس کے اذن سے ہم کشتیاں بناتے ہیں

زمین کی دھوپ زمانے کی دھوپ ذہن کی دھوپ
ہم ایسی دھوپ میں بھی سائباں بناتےہیں

خود اپنی خاک سے کرتے ہیں موج نور کشید
پھر اس سے ایک نئی کہکشاں بناتے ہیں

کہانی جب نظر آتی ہے ختم ہوتی ہوئی
وہیں سے ایک نئی داستاں بناتے ہیں

کھلی فضا میں خوش آواز طائروں کے ہجوم
مگر وہ لوگ جو تیر و سناں بناتے ہیں

پلٹ کے آئے غریب الوطن پلٹنا تھا
یہ دیکھنا ہے کہ اب گھر کہاں بناتے ہیں

یہ نقش ہم جو سر لوح جاں بناتے ہیں
کوئی بناتا ہے ہم خود کہاں بناتے ہیں
Read more click here

اپنا تبصرہ بھیجیں