Hum Tumharay Gham Sy Bahar Aa Gay

غزل
ہم تمہارے غم سے باہر آ گئے
ہجر سے بچنے کے منتر آ گئے

میں نے تم کہ اندر آنے کا کہا
تم تو میرے دل کے اندرآ گئے

ایک ہی عورت کو دنیا مان کر
اتنا گھوما ہوں کہ چکر آ گئے

امتحانِ عشق مشکل تھا مگر
جادو کر کے اچھے نمبر آ گئے

تیرے کچھ عاشق تو گنگا رام ہیں
اور جو باقی تھے نشتر آ گئے
Ghazal
Hum Tumharay Gham Sy Bahar Aa Gay
Hijar sy bachny ky mantar aa gay

Main tum ko andar anay ka kaha
Tum tu meray dil ky andar aa gay

Aik hi aurat ko duniya maan kar
Itna ghoma hun keh chakar aa gay

Imtehan e ishq Mushkil tha magar
Jado kar ky achhy number aa gay

Teray kuch ashiq to ganga raam hain
Aur jo baki thay nishtar aa gay

اپنا تبصرہ بھیجیں