Taptay Saharaon Main Sab Ky Sar Per Anchal Ho

Ghazal
Tapte Saharaon Main Sab Ke Sar Per Anchal Ho Gaya
Us ne zulfen khol di aur masala hal ho gaya

Aankh jaise tujh ko rukhsat kar ke patthar ho gayi
Hath teri chhatriyan thame hoe shall ho gaya

Baadalon main ud raha tha main wo jab tak sath tha
Aik din wo mujh se bichra aur main paidal ho gaya
غزل
تپتے صحراؤں میں سب کے سر پر آنچل ہوگیا
اُس نے زلفیں کھول دی اور مسئلہ حل ہو گیا

آنکھ جیسے تجھ کو رخصت کر کے پتھر ہوگئی
ہاتھ تیری چھتریاں تھامے ہوئے شل ہو گیا

بادلوں میں اُڑ رہا تھا میں وہ جب تک ساتھ تھا
ایک دن وہ مجھ سے بچھڑا اور میں پیدل ہو گیاi

اپنا تبصرہ بھیجیں