Tum Ko Wehshat To Sikha Di Hai Guzaray Laiq

Tum Ko Wehshat To Sikha Di Hai Guzaray Laiq

Tum Ko Wehshat To Sikha Di Hai Guzaray Laiq
Aur ko koi hukum, koi kaam, hamaray laiq

Maazrat! mein tu kisi aur ke masraf mein hoon
Dhoond deta hoon magar koi tumharay laiq

Aik do zakhmon ki gehrai aur aankhon ke khandhar
Aur kuch khaas nahi mujh mein nizaray laiq

Ghonsla, chaon hara rang samar kuch bhi nahi
Dekh mujh jaisay shajar hote hain aray laiq

Do wajuhat se iss dil ki asami nah mili
Aik darkhwast guzar itnay do saray laiq

Iss ilaqay mein ujaloon ki jaga koi nahi
Sirf parcham hai yahan chand sitaray laiq

Mujh nikammay ko chuna uss ne tars khaa ke umair
Dekhtay reh gaye hasrat se bicharay laiq

Tum ko wehshat to sikha di hai guzaray laiq
Aur ko koi hukum, koi kaam, hamaray laiq
غزل
تم کو وحشت تو سکھا دی ہے، گزارے لائق
اور کوئی حکم ، کوئی کام، ہمارے لائق

معذرت! میں تو کسی اور کے مصرف میں ہوں
ڈھونڈ دیتا ہوں مگر کوئی تمہارے لائق

ایک دو زخموں کی گہرائی اور آنکھوں کے کھنڈر
اور کچھ خاص نہیں مجھ میں نظارے لائق

گھونسلہ، چھاؤں، ہرا رنگ، ثمر کچھ بھی نہیں
دیکھ ! مجھ جیسے شجر ہوتے ہیں آرے لائق

دو وجوہات سے اِس دل کی اسامی نہ ملی
ایک ، درخواست گزار اِنتے دو، سارے لائق

اِس علاقے میں اُجالوں کی جگہ کوئی نہیں
صرف پرچم ہے یہاں چاند ستارے لائق

مجھ نکمے کو چنا اُس نے ترس کھا کے عمیر
دیکھتے رہ گئے حسرت سے بچارے لائق

تم کو وحشت تو سکھا دی ہے، گزارے لائق
اور کوئی حکم ، کوئی کام، ہمارے لائق
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں