Mere Muh Main Zuban Hai Hi Nahi

Ghazal
Mere Muh Main Zuban Hai Hi Nahi
Jaoo koi biyan hai hi nahi
 
Rohoo se ruh ka milap hai yeh
Jism tou darmiyan hai hi nahi
 
Dosta teer udher se aae ga
Jis taraf tera dhayin hai hi nahi
 
Yeh to chalti nazar aati nahi
Es muhabbat main jaan hai hi nahi
غزل
میرے منہ میں زبان ہے ہی نہیں
جاؤں کوئی بیان ہے ہی نہیں
 
روح سے روح کا ملاپ ہے یہ
جسم تو درمیان ہے ہی نہیں
 
دوستا تیر اُدھر سے آۓ گا
جس طرف تیرا دھیان ہے ہی نہیں
 
یہ تو چلتی نظر نہیں آتی
اس محبت میں جان ہے ہی نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں