Sab Kuch Hote Bik Jate Hain Log Yeh Kaise Bik

Ghazal
Sab Kuch Hote Bik Jate Hain Log Yeh Kaise Bik Jatay Hain
Totay tou wo ghar, ghar nahi rehta , sab ke hissay bik jatay hain
 
Waqat parhe tou dekha hum ne, bechne walay bik jatay hain
Such tou phir such rehta hai likhne walay lekh jatay hain
 
Kon kharide un ke ghum ko jin ke bachay bik jatay hain
Mehnat kash ke hath bike to khawab bhi us ke bik jatay hain
 
Baat to sari qeemat ki hai achhay achhay bik jatay hain
Kiya kiya mehnagay log jahan per , kitnay sastay bik jatay hain
 
Bachay un ko cho nahi patay aur khilonay bik jatay hain
Such ka gahak aik nahi hai lakhon dhokay bik jatay hain
 
Diwarain darwazay kiya hain ghar ke naqshay bik jatay hain
Amjad jin ko bikna ho wo kisi bahane bik jatay hain
 
Sab Kuch Hote Bik Jate Hain Log Yeh Kaise Bik Jatay Hain
Totay tou wo ghar, ghar nahi rehta , sab ke hissay bik jatay hain
 
غزل
سب کچھ ہوتے بِک جاتے ہیں لوگ یہ کیسے بِک جاتے ہیں
ٹوٹے تو وہ گھر گھر نہیں رہتا ، سب کے حصے بِک جاتے ہیں
 
وقت ٗپڑے تو دیکھا ہم نے ،بیچنے والے بِک جاتے ہیں
سچ تو پھر سچ رہتا ہے لکھنے والے لکھ جاتے ہیں
 
کون خریدے اُن کے غم کو جن کے بچے بِک جاتے ہیں
محنت کش کے ہاتھ بِکے تو خواب بھی اُس کے بِک جاتے ہیں
 
بات تو ساری قیمت کی ہے اچھے اچھے بِک جاتے ہیں
کیا کیا مہنگے لوگ جہاں پر ،کتنے سستے بِک جاتے ہیں
 
بچے اُن کو چھو نہیں پاتے اور کھلونے بِک جاتے ہیں
سچ کا گاہک اک بھی نہیں ہے لاکھوں دھوکے بِک جاتے ہیں
 
دیواریں دروازے کیا ہیں گھر کے نقشے بِک جاتے ہیں
امؔجد جن کو بِکنا ہو وہ کسی بہانے بِک جاتے ہیں
 

اپنا تبصرہ بھیجیں