Ek Nazam

چھٹپٹے کے غرفے میں
لمحے اب بھی ملتے ہیں

صبح کے دھندلکے میں
پھول اب بھی کھلتے ہیں
اب بھی کوہساروں پر
سر کشیدہ ہریالی
پتھروں کی دیواریں
توڑ کر نکلتی ہے
اب بھی آب زاروں پر
کشتیوں کی صورت میں
زیست کی توانائی
زاویے بدلتی ہے
اب بھی گھاس کے میداں
شبنمی ستاروں سے
میرے خاکداں پر بھی
آسماں سجاتے ہیں
اب بھی کھیت گندم کے
تیز دھوپ میں تپ کر
اس غریب دھرتی کو
زر فشاں بناتے ہیں
سائے اب بھی چلتے ہیں
سورج اب بھی ڈھلتا ہے
صبحیں اب بھی روشن ہیں
راتیں اب بھی کالی ہیں
ذہن اب بھی چٹیل ہیں
روحیں اب بھی بنجر ہیں
جسم اب بھی ننگے ہیں
ہاتھ اب بھی خالی ہیں
اب بھی سبز فصلوں میں
زندگی کے رکھوالے
زرد زرد چہروں پر
خاک اوڑھے رہتے ہیں
اب بھی ان کی تقدیریں
منقلب نہیں ہوتیں
منقلب نہیں ہوں گی
کہنے والے کہتے ہیں
گردشوں کی رعنائی
عام ہی نہیں ہوتی
اپنے روز اول کی
شام ہی نہیں ہوت
Ek Nazam
Chhutpute Ke Ghurfe Mein
lamhe ab bhi milte hain
subh ke dhundalke mein
phul ab bhi khilte hain

ab bhi kohsaron par
sar-kashida hariyali
pattharon ki diwaren
tod kar nikalti hai

ab bhi aab-zaron par
kashtiyon ki surat mein
zist ki tawanai
zawiye badalti hai

ab bhi ghas ke maidan
shabnami sitaron se
mere khak-dan par bhi
aasman sajate hain

ab bhi khet gandum ke
tez dhup mein tap kar
is gharib dharti ko
zar-fishan banate hain

saye ab bhi chalte hain
suraj ab bhi Dhalta hai
subhen ab bhi raushan hain
raaten ab bhi kali hain

zehn ab bhi chatyal hain
ruhen ab bhi banjar hain
jism ab bhi nange hain
hath ab bhi KHali hain

ab bhi sabz faslon mein
zindagi ke rakhwale
zard zard chehron par
khak odhe rahte hain

ab bhi un ki taqdiren
munqalib nahin hotin
munqalib nahin hongi
kahne wale kahte hain

gardishon ki ranai
aam hi nahin hoti
apne roz-e-awwal ki
sham hi nahin hoti

اپنا تبصرہ بھیجیں