Main Takiye Par Sitare Bo Raha Hon

غزل
میں تکیے پر ستارے بو رہا ہوں
جنم دن ہے اکیلا رو رہا ہوں

کسی نے جھانک کر دیکھا نہ دل میں
کہ میں اندر سے کیسا ہو رہا ہوں

جو دل پر داغ ہیں پچھلی رتوں کے
انہیں اب آنسوؤں سے دھو رہا ہوں

سبھی پرچھائیاں ہیں ساتھ لیکن
بھری محفل میں تنہا ہو رہا ہوں

مجھے ان نسبتوں سے کون سمجھا
میں رشتے میں کسی کا جو رہا ہوں

میں چونک اٹھتا ہوں اکثر بیٹھے بیٹھے
کہ جیسے جاگتے میں سو رہا ہوں

کسے پانے کی خواہش ہے کہ ساجدؔ
میں رفتہ رفتہ خود کو کھو رہا ہوں
Ghazal
Main Takiye Par Sitare Bo Raha Hon
Janam-din Hai Akela Ro Raha Hon

Kisi Ne Jhank Kar Dekha Na Dil Mein
Ki Main Andar Se Kaisa Ho Raha Hon

Jo Dil Par Dagh Hain Pichhli Ruton Ke
Unhen Ab Aansuon Se Dho Raha Hon

Sabhi Parchhaiyan Hain Sath Lekin
Bhari Mahfil Mein Tanha Ho Raha Hon

Mujhe In Nisbaton Se Kaun Samjha
Main Rishte Mein Kisi Ka Jo Raha Hon

Main Chaunk Uthta Hon Aksar Baithe Baithe
Ki Jaise Jagte Mein So Raha Hon

Kise Pane Ki Khwahish Hai Ki ‘Sajid’
Main Rafta Rafta Khud Ko Kho Raha Hon

اپنا تبصرہ بھیجیں