Hamein Tahaffuz Ka Khabt Chopnay Ki Lat Nahi Thi

Hamein Tahaffuz Ka Khabt Chopnay Ki Lat Nahi Thi

Hamein Tahaffuz Ka Khabt Chopnay Ki Lat Nahi Thi
Falak se rabt ustwaar tha ghar ki chhat nahi thi

Mein karobaar junoon ko ab tark kar chukka hoon
Woh kaam acha tha lekin uss mein bachat nahi thi

Woh shakhs bhi shair tha koi sal mumtena mein
Nahi khula gircha uss ki koi parat nahi thi

Bohat sa gham iss liye munafa ghata ke becha
Kiya tha jitna daramad itni khapat nahi thi

Hamara chehra bahut si aankhon ka peer hai ab
Woh aankhen jin ko malal ki maarifat nahi thi

Ek aur ishq aa gaya tha dawran hijr taala
Momanat to nahi thi mujh mein sakat nahi thi

Bhala ho num ka keh ek jagah par bitha diya hai
Wagarna mujh gird ki zameen se jorat nahi thi

Hamein tahaffuz ka khabt chopnay ki lat nahi thi
Falak se rabt ustwaar tha ghar ki chhat nahi thi
غزل
ہمیں تحفظ کا خبط، چھپنے کی لت نہیں تھی
فلک سے ربط استوار تھا گھر کی چھت نہیں تھی

میں کاروبارِ جنوں کو اب ترک کر چکا ہوں
وہ کام اچھا تھا لیکن اُس میں بچت نہیں تھی

وہ شخص بھی شعر تھا کوئی سل ممتنع میں
نہیں کھلا گر چہ اس کی کوئی پرت نہیں تھی

بہت سا غم اِس لئے منافع گھٹا کے بیچا
کیا تھا جتنا درآمد اِتنی کھپت نہیں تھی

ہمارا چہرہ بہت سی آنکھوں کا پیر ہے اب
وہ آنکھیں جن کو ملال کی معرفت نہیں تھی

اک اور عشق آ گیا تھا دوران ہجر ٹالا
ممانعت تو نہیں تھی، مجھ میں سکت نہیں تھی

بھلا ہو نم کا کہ اک جگہ پر بٹھا دیا ہے
وگرنہ مجھ گرد کی زمیں سے جڑت نہیں تھی

ہمیں تحفظ کا خبط، چھپنے کی لت نہیں تھی
فلک سے ربط استوار تھا گھر کی چھت نہیں تھی
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں