Koi Parchai Zair Aasman Rehne Nahi Dunga

Koi Parchai Zair Aasman Rehne Nahi Dunga

Koi Parchai Zair Aasman Rehne Nahi Dunga
Kisi ke sar peh koi saibaan rehne nahi dunga

Mein pehle munhadim kardunga har shai har talluq ko
Phir us ke baad dharti peh makan rehne nahi dunga

Mein ik la tanha ki aarzoo mein sari duniya ko
Aseer khwahish weham-o-guman rehne nahi dunga

Mein parday chaak kardunga sabhi be mani rishton ke
Kisi ko bhi kisi peh meharban rehne nahi dunga

Talluq gir nahi koi tou rah-o-rasam duniya bhi
Mein apne aur tumhare darmiyan rehne nahi dunga

Mein pehle khench lunga pawon ke neechay se dharti ko
Phir iss ke baad sar peh aasman rehne nahi dunga

Koi parchai zair aasman rehne nahi dunga
Kisi ke sar peh koi saibaan rehne nahi dunga
غزل
کوئی پرچھائی زیر آسماں رہنے نہیں دوں گا
کسی کے سر پہ کوئی سائباں رہنے نہیں دوں گا

میں پہلے منہدم کر دوں گا ہر شے ہر تعلق کو
پھر اُس کے بعد دھرتی پہ مکاں رہنے نہیں دوں گا

میں اک لا تنہا کی آرزو میں ساری دنیا کو
اسیر خواہش وہم و گماں رہنے نہیں دوں گا

میں پردے چاک کردوں گا سبھی بے معنی رشتوں کے
کسی کو بھی کسی پہ مہرباں رہنے نہیں دوں گا

تعلق گر نہیں کوئی تو راہ و رسم دنیا بھی
میں اپنے اور تمہارے درمیاں رہنے نہیں دوں گا

میں پہلے کھینچ لوں گا پاؤں کے نیچے سے دھرتی کو
پھر اس کے بعد سر پہ آسماں رہنے نہیں دوں گا

کوئی پرچھائی زیر آسماں رہنے نہیں دوں گا
کسی کے سر پہ کوئی سائباں رہنے نہیں دوں گا

اپنا تبصرہ بھیجیں