Wo Bagh Mein Mera Muntazir Tha

شاعرہ:پروین شاکر
نظم
وہ باغ میں میرا منتظر تھا
اور چاند طلوع ہو رہا تھا

زلف شب وصل کھل رہی تھی
خوشبو سانسوں میں گھل رہی تھی

آئی تھی میں اپنے پی سے ملنے
جیسے کوئی گل ہوا سے کھلنے

اک عمر کے بعد میں ہنسی تھی
خود پر کتنی توجہ دی تھی!

پہنا گہرا بسنتی جوڑا
اور عطر سہاگ میں بسایا

آئینے میں خود کو پھر کئی بار
اس کی نظروں سے میں نے دیکھا

صندل سے چمک رہا تھا ماتھا
چندن سے بدن مہک رہا تھا

ہونٹوں پہ بہت شریر لالی
گالوں پہ گلال کھیلتا تھا

بالوں میں پروئے اتنے موتی
تاروں کا گمان ہو رہا تھا

افشاں کی لکیر مانگ میں تھی
کاجل آنکھوں میں ہنس رہا تھا

کانوں میں مچل رہی تھی بالی
بانہوں سے لپٹ رہا تھا گجرا

اور سارے بدن سے پھوٹتا تھا
اس کے لیے گیت جو لکھا تھا!

ہاتھوں میں لیے دئیے کی تھالی
اس کے قدموں میں جا کے بیٹھی

آئی تھی کہ آرتی اتاروں
سارے جیون کو دان کر دوں!

دیکھا مرے دیوتا نے مجھ کو
بعد اس کے ذرا سا مسکرایا

پھر میرے سنہرے تھال پر ہاتھ
رکھا بھی تو اک دیا اٹھایا

اور میری تمام زندگی سے
مانگی بھی تو ایک شام مانگی

Nazam

Wo Bagh Mein Mera Muntazir Tha
Aur chand tulua ho raha tha

Zulf-e-shab-e-wasl khul rahi thi
Khushbu sanson mein ghul rahi thi

Aai thi main apne pi se milne
Jaise koi gul hawa se khilne

Ek umr ke baad main hansi thi
Khud par kitni tawajjoh di thi!

Pahna gahra basanti joda
Aur itr-e-suhag mein basaya

Aaine mein khud ko phir kai bar
Us ki nazron se main ne dekha

Sandal se chamak raha tha matha
Chandan se badan mahak raha tha

Honton pe bahut sharir lali
Galon pe gulal khelta tha

Baalon mein piroe itne moti
Taron ka guman ho raha tha

Afshan ki lakir mang mein thi
Kajal aankhon mein hans raha tha

Kanon mein machal rahi thi baali
Banhon se lipat raha tha gajra

Aur sare badan se phutta tha
Us ke liye git jo likha tha

Hathon mein liye diye ki thaali
Us ke qadmon mein ja ke baithi

Aai thi ki aarti utarun
Sare jiwan ko dan kar dun!

Dekha mere dewta ne mujh ko
Baad is ke zara sa muskuraya

Phir mere sunahre thaal par hath
Rakkha bhi to ek diya uthaya

Aur meri tamam zindagi se
Mangi bhi to ek sham mangi

اپنا تبصرہ بھیجیں